نماز کی اہمیت اور فضیلت

جنوری 31, 2011 at 08:31 تبصرہ کیجیے

نماز کی اہمیت
قرآن مجید اور احادیث کریمہ میں جا بجا نماز کی پابندی کا حکم دیا گیا ہے۔
ارشاد باری تعالی ہوا، (اور نماز قائم رکھو اور زکوہ دو اور رکوع کرنے والوں کے ساتھ رکوع کرو)۔ (البقرہ ۴۳، کنز الایمان فی ترجمتہ القرآن)
دوسری جگہ ارشاد فرمایا، (نگہبانی کرو سب نمازوں کی اور بیچ کی نماز (عصر) کی)۔ (البقرہ ۲۳۸، کنز الایمان)۔ ایک اور مقام پر فرمایا گیا، (اور نماز قائم رکھو دن کے دونوں کناروں اور کچھ رات کے حصوں میں) ۔ (ھود ۱۱۴، کنز الایمان)
دن کے دونوں کناروں سے صبح و شام مراد ہیں۔ زوال سے قبل کا وقت صبح میں اور بعد کا شام میں داخل ہے۔ صبح کی نماز فجر اور شام کی نماز ظہر و عصر ہیں اور رات کے حصوں کی نمازیں مغرب اور عشاء ہیں۔ (تفسیر خزائن العرفان)
قرآن کریم میں نماز پڑھنے کو مشرکوں کی مخالفت قرار دیا گیا ہے۔ ارشاد ہوا، (اور نماز قائم رکھو اور مشرکوں (میں) سے نہ ہو) ۔ (الروم ، ۳۱)
گویا نماز نہ پڑھنا مشرکوں کی مثل ہونا ہے۔ اس کی وضاحت آقائے دو جہاں صلی اللہ علیہ وسلم کے اس ارشاد گرامی سے بھی ہوتی ہے کہ (بندے اور کفر کے درمیان فرق نماز چھوڑنا ہے)۔ (مسلم)
قرآن کریم میں ایک جگہ بے نمازیوں کے لیے یوں وعید فرمائی گئی۔
(تو ان کے بعد انکی جگہ وہ ناخلف آئے جنہوں نے نمازیں گنوائیں (یعنی ضائع کیں) اور اپنی خواہشوں کے پیچھے ہوئے تو عنقریب وہ دوزخ میں غئی کا جنگل پائیں گے)۔ (مریم ۵۹، کنز الایمان)
غئی دوزخ کے نچلے حصے میں ایک کنواں ہے جس میں اہل دوزخ کی پیپ گرتی ہے ایک قول یہ بھی ہے کہ یہ جہنم کی سب سے زیادہ گرم اور گہری وادی ہے اور اس میں ایک کنواں ہے جب جہنم کی آگ بجھنے پر آتی ہے تو اللہ عزوجل اس کنوئیں کو کھول دیتا ہے جس سے وہ بدستور بھڑکنے لگتی ہے۔ یہ کنواں بےنمازیوں ، زانیوں ، شرابیوں ، سود خوروں اور والدین کو ایذا دینے والوں کے لیے ہے۔
قرآن کریم میں منافقوں کی ایک نشانی یہ بیان کی گئی ہے کہ وہ نماز پڑھنے میں سستی کرتے ہیں اور اسے بوجھ سمجھتے ہیں۔
ارشاد ہوا، (اور جب نماز کو کھڑے ہوں تو بھارے جی سے ، لوگوں کو دکھاوا کرتے ہیں)۔ (النساء،۱۴۲)
منافقوں کے متعلق سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے، (منافقوں پر فجر اور عشاء سے زیادہ کوئی نماز بھاری نہیں اور یہ اگر جانتے کہ ان نمازوں میں کیا ثواب ہے تو زمین پر گھسٹتے ہوئے بھی پہنچتے)۔ (بخاری ، مسلم)۔
قرآن کریم میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ نماز پڑھنا ان لوگوں کے لیے ہرگز مشکل نہیں ہے جو اللہ تعالی اور آخرت پر یقین رکھتے ہیں۔
ارشادہوا، (اور بیشک نماز ضرور بھاری ہے مگر ان پر نہیں جو دل سے میری طرف جھکتے ہیں، جنہیں یقین ہے کہ انہیں اپنے رب سے ملنا ہے اور اسی کی طرف پھرنا)۔ (البقرہ ۴۵،۴۶)
قرآن و حدیث کی روشنی میں یہ بات واضح ہوگئی کہ ہر مسلمان پر پانچوں نمازیں پابندی سے ادا کرنا فرض ہے۔ نماز پڑھنے میں سستی کرنا خصوصاََ فجر اور عشاء کی نمازیں نہ پڑھنا منافقوں کی نشانی ہے۔ یہ بھی معلوم ہو اکہ نماز نہ پڑھنا کافروں کا طریقہ ہے اسی لیے صحابہ کرام اعمال میں سے نماز کے سوا کسی عمل کے چھوڑنے کو کفر نہیں سمجھتے تھے۔
نماز کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بھی لگایئے کہ حدیث پاک میں بچپن ہی سے نماز پڑھنے کی تاکید فرمائی گئی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، (جب بچے سات سال کے ہو جائیں تو انہیں نماز پڑھنے کا حکم دو اور جب وہ دس سال کے ہوجائیں تو نماز میں غفلت پر انہیں مارو اور اس عمر سے ان کے بستر بھی علیحدہ کردو۔ (ابو داؤد
دن و رات یعنی چوبیس گھنٹوں میں اللہ تعالیٰ نے پانچ وقت کی نمازیں فرض کی ہیں اور ان میں سے ہرنماز کی فرضیت کا تعلق اپنے وقت کے ساتھ وابستہ و قائم ہے، چنانچہ وقت داخل ہونے پر ہی نماز فرض ہوتی ہے، اس سے پہلے نہیں اور وقت کے اندر ہی ادا ہوتی ہے اور وقت گزرنے پر نماز قضا ہوجاتی ہے۔ جس سے ظاہر ہے کہ جس طرح پانچ نمازوں کی اہمیت ہے اسی طرح ان کو اپنے وقت پرادا کرنے کی بھی اہمیت ہے اور نماز کو وقت بے وقت پڑھنا ٹھیک نہیں۔
قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے :’’بے شک نماز مومنوں پر مقررہ وقت پر فرض کی گئی ہے‘‘۔(سورہ نساء آیت ۱۰۳)
اس آیت سے معلوم ہوا کہ نماز وقت کی پابندی کے ساتھ فرض ہے اور نماز کو اپنے وقت پر پڑھنا ضروری ہے اور اس کو قضا کر دینا گناہ ہے۔
حضرت ابنِ مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ: ’’جب بندہ اول وقت میں نماز پڑھتا ہے توہ وہ نماز آسمان کی طرف چڑھتی ہے یہاں تک کہ عرش تک پہنچ جاتی ہے اور نماز پڑھنے والے کیلئے قیامت کے دن تک استغفار کرتی رہتی ہے اور یہ کہتی ہے کہ اللہ تعالیٰ تیری اس طرح سے حفاظت کرے جس طرح تو نے میری حفاظت کی ہے اور جب بندہ بے وقت نماز پڑھتا ہے تو وہ نماز اوپر چڑھتی ہے لیکن اس کیلئے نور نہیں ہوتا، اس وجہ سے وہ آسمان تک جا کر ٹھہر جاتی ہیں، پھراس کو بوسیدہ (اور پرانے) کپڑے کی طرح لپیٹ کر بے وقت نماز پڑھنے والے کے چہرہ پر مار دیا جاتا ہے اور وہ نماز یہ بد دعا دیتی ہے کہ اللہ تعالیٰ تجھے بھی اسی طرح ضائع کرے جس طرح تو نے مجھے ضائع کیا ہے۔(کنزالعمال)
مطلب یہ ہے کہ وقت پر پڑھی ہوئی نماز کے اندر قبولیت و نورانیت ہوتی ہے جس کی وجہ سے وہ عرش تک پہنچ جاتی ہے اور نمازی کیلئے تاقیامت حفاظت کی دعا کرتی رہتی ہے اور بغیر معقول عذر کے بے وقت پڑھی ہوئی نماز کے اندر مقبولیت ونورانیت نہیں ہوتی جس کی وجہ سے وہ عرش تک نہیں پہنچ پاتی اور نمازی کی طرف برے طریقہ سے لوٹا دی جاتی ہے اور وہ نمازی کو بددعا دیتی ہے۔
بعض احادیث وروایات میں نماز کو ٹھیک ٹھیک اور صحیح طرح پڑھنے پر بھی اس طرح کی قبولیت کا اور غلط طریقہ پر پڑھنے پر اس طرح نماز کے مردود ہونے کا ذکر ملتا ہے، دونوں میں کوئی ٹکراؤ نہیں کیونکہ نماز کو ٹھیک اور صحیح ادا کرنے میں نماز کو وقت پر پڑھنا بھی شامل ہے اور غلط طریقہ سے پڑھنے میں اس کو بے وقت پڑھنا بھی شامل ہے۔
حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا کہ اے علی تین چیزوں میں تاخیر نہ کرو، ایک تو نماز جب اس کا وقت آجائے، دوسرے جنازہ جب حاضر ہوجائے، تیسرے جوان لڑکی کا جب (نکاح کا)جوڑ مل جائے۔ (ترمذی)
اور مسند احمد ومستدرک حاکم میں حضرت علی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ’’بے شک رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اے علی تین چیزوں میں دیر نہ کرو ایک تو نماز میں جب اس کا وقت آجائے، دوسرے جنازہ میں جب حاضر ہو جائے، تیسرے جوان لڑکی (کے نکاح میں )جب اس کا جوڑ مل جائے۔(مسند احمد، مستدرک حاکم)
فائدہ: حضرت علی رضی اللہ عنہ کی اس حدیث سے معلوم ہوا کہ نماز ان اعمال میں سے ہے جنہیں وقت آنے کے بعد مؤخر نہیں کرنا چاہئے، یعنی وقت پر ادا کرنا چاہئے۔ اس سے نماز کو وقت پر ادا کرنے کی اہمیت و تاکید معلوم ہوئی۔ یہ حدیث سند کے اعتبار سے درست ہے۔
حضرت عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ: ’’میں نے رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سنا کہ آپ صلٰی اللہ علیہ وسلم فرما رہے تھے کہ جس نے فرض نماز پڑھی اور اس کو اس کے وقت پر ہی ادا کیا تو وہ اللہ تعالیٰ سے اس حال میں ملاقات کرے گا کہ اس کیلئے عہد ہو گا کہ اللہ تعالیٰ اسے عذاب نہ دیں اور جس نے نماز کو قائم نہیں کیا اور اس کو اس کے وقت پر نہیں پڑھا تو وہ اللہ تعالیٰ سے اس حال میں ملاقات کرے گا کہ اس کیلئے کوئی عہد نہ ہوگا، اللہ تعالیٰ چاہیں گے تو اسے عذاب دیں گے اور چاہیں گے تو اس پر رحم فرمائیں گے۔ (مسندالبزار)
حضرت ابوعمروشیبانی نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم کے بعض صحابہ سے یہ حدیث بیان کرتے تھے کہ: ’’رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا گیا کہ کون سا عمل سب سے زیادہ فضیلت والا ہے؟ تو نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سب سے زیادہ فضیلت والا عمل اپنے وقت پر نماز پڑھنا اور والدین کے ساتھ نیک سلوک کرنا اور جہاد کرنا ہے۔(مسند احمد)
اس حدیث سے معلوم ہوا کہ نماز کو وقت پر پڑھنا افضل ترین اعمال میں سے ہے۔
حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کی یہ حدیث بعض دوسری سندوں کے ساتھ بھی تھوڑے بہت الفاظ کے فرق کے ساتھ مروی ہے، چنانچہ ایک روایت کے یہ الفاظ ہیں: رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سب سے افضل عمل اپنے وقت پر نماز پڑھنا اور اللہ عزوجل کے راستہ میں جہاد کرنا ہے۔(شعب الایمان)
اور ایک روایت میں یہ الفاظ ہیں: سب سے افضل عمل نماز کو اپنے وقت پر ادا کرنا اور والدین کے ساتھ نیک سلوک کرنا ہے۔ (مسند البزارک)
اور محمد بن نصرمروزی رحمہ اللہ نے اپنی کتاب ’’تعظیم قدر الصلاۃ‘‘ میں حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے:’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ کون سا عمل سب سے زیادہ فضیلت والا ہے؟ تو رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ نماز کو اپنے وقت پر پڑھنا۔
اور ایک روایت ان الفاظ میں روایت کی ہے کہ : ’’حضرت ابنِ مسعود رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ کون سا عمل سب سے زیادہ فضیلت رکھتا ہے؟تو نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ نمازوں کو اپنے وقت پر پڑھنا۔
اور ان الفاظ میں بھی روایت کی ہے کہ: ’’حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ کون سا عمل سب سے زیادہ فضیلت رکھتا ہے؟ رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اپنے وقت پر نماز پڑھنا۔
نیز ان الفاظ میں بھی ایک روایت نقل کی ہے کہ : ’’حضرت ابنِ مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ کون سا عمل سب سے افضل ہے؟ رسول اللہ صلٰی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ نمازوں کو اپنے اپنے وقت پر ادا کرنا۔
ان تمام روایات سے مختلف الفاظ کے ساتھ نماز کو اپنے وقت پر پڑھنے کی فضیلت معلوم ہوئی کہ نماز جب اپنے وقت پرادا کی جاتی ہے تو یہ نیک اعمال میں افضل ترین عمل شمار ہوتا ہے۔
اس لئے نماز کو وقت پر ادا کرنے کا بھرپور اہتمام کرنا چاہئے۔
امام مالک رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ ’’حضرت یحییٰ بن سعید فرماتے تھے کہ نمازی کو چاہئے کہ نمازاس طرح پڑھا کرے کہ اس کا وقت فوت نہ ہو اور نماز کے وقت کا فوت ہو جانا گھر اور مال دولت سے زیادہ عظیم چیز ہے۔(موطاامام مالک)
مطلب یہ تھا کہ گھر اور مال کی اتنی اہمیت نہیں جتنی کہ نماز کو وقت پرپڑھنے کی ہے، لہٰذا گھر بار اور مال ودولت میں لگ کر نماز کو قضا کرنا درست نہیں۔
نماز کی فضیلت رسول اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی زبانی
  • نماز دین کا ستون
  • نماز مومن کی معراج
  • نمازایمان کی نشانی
  • نماز شکر گزاری کا بھترین ذریعہ
  • نماز میزان عمل
  • ہر عمل نماز کا تابع
  • روز قیامت پہلا سوال نماز کے بارے میں
  • نمازی کے ساتھ ہر چیز خدا کی عبادت گزار
  • نمازی کا گھر آسمان والوں کے لئے نور
نماز کے اثرات اور فوائد
  • گناہوں سے دوری کا ذریعہ
  • گناہوں کی نابودی کا سبب
  • شیطان کو دفع کرنے کا وسیلہ
  • بلاؤں سے دوری
نمازوں کو چھوڑ دینا بہت ہی شدید گناہِ کبیرہ اور جہنم میں لے جانے والا کام ہے. اس لئے ابھی بھی وقت ہے. ہوش کے ناخن لیں اور اپنی دنیا اور آخرت دونوں سنوار لیں.

Entry filed under: Islam : اسلام. Tags: , , , , , , , , , .

انور مسعود کی مزاحیہ پنجابی شاعری پروین شاکر کے بارے میں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

Trackback this post  |  Subscribe to the comments via RSS Feed


A Place For Indian And Pakistani Chatters

Todd Space Social network

زمرے

RSS Urdu Sad Poetry

  • GHAZAL BY SAGHAR SIDDIQUI مارچ 1, 2015
    Filed under: Ghazal, Nazam, Saghir Siddiqui, Urdu Poetry Tagged: FAREB, Ghazal, Ghazal by Saghir Siddiqui, NASHEMAN, Pakistani Poetry Writer, QAYAMAT, Sad Urdu Poetry, SAGHAR, Saghir Siddiqui, SHAGOOFAY, SHETAN, TERI DUNIYA MAI YA RAB, Urdu, Urdu Adab, Urdu Poetry, Urdu shayri, ZEEST
  • چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں فروری 28, 2015
    چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں نہ میں تم سے کوئی امید رکھوں دل نوازی کی نہ تم میری طرف دیکھو غلط انداز نظروں سے تمہیں بھی کوئی الجھن روکتی ھے پیش قدمی سے مجھے بھی لوگ کہتے ہیں کے یہ جلوئے پرائے ہیں میرے ہمراہ اب ہیں رسوائیاں میرے ماضی […] […]
  • Dil main Thkana اکتوبر 6, 2012
    درد کا دل میں ٹھکا نہ ہو گیا زندگی بھر کا تماشا ہو گیا مبتلائے ھم بھی ہو گئے ان کا ہنس دینا بہانا ہو گیا بے خبر گلشن تھا میرے عشق سے غنچے چٹکے راز افشا ہو گیا ماہ و انجم پر نظر پڑنے لگی ان کو دیکھے اک زمانہ ہو گیا تھے نیاز […] […]
  • Ghazal-Sad Poetry ستمبر 9, 2012
    Ghazal-Sad PoetryFiled under: Bazm-e-Adab, Ghazal, Meri Pasand, My Collection, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry, Poetry Collection, ROMANTIC POETRY, Sad Poetry, Uncategorized, Urdu, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: ahmed faraz, Bazm-e-Adab, Female Writer, Ikhlaki Kahanian, Imran […]
  • Ik tere rooth janne say اگست 28, 2012
    تیرے روٹھ جانے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا پھول بھی کھلیں گے تارے بھی چمکیں گے مینا بھی برسے گی ھاں مگر کسی کو مسکرانہ بھول جائے گا “اک تیرے روٹھ جانے سے” Filed under: Nazam, Urdu Poetry Tagged: Faraq, ik teray, Indian, Muhabbat, Muskurana, Nahi, Nazam, nazm, Pakistani, Poem, Poetry, Romantic Urdu Poetry, […] […]
  • yadoon ka jhoonka اگست 13, 2012
    یادوں کا اک جھونکا آیا ھم سے ملنے برسوں بعد پہلے اتنا رٰوئے نہیں تھے جتنا روٰئے برسوں بعد لمحہ لمحہ گھر اجڑا ھے، مشکل سے احساس ہوا پتھر آئے برسوں پہلے ، شیشے ٹوٹے برسوں بعد آج ہماری خاک پہ دنیا رونے دھونے بیٹھی ھے پھول ہوئے ہیں اتنے سستے جانے کتنے برسوں بعد […] […]
  • Log Mosam Ki tarah Kaisay Badal Jaty Hain-Urdu Gazhal جولائی 29, 2012
    Log Mosam Ki tarah Kaisay Badal Jaty Hain-Urdu Gazhal Filed under: Bazm-e-Adab, Dil Hai Betaab, Meri Pasand, My Collection, Nazam, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry Collection, Sad Poetry, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: Bazm-e-Adab, Best Urdu Poetry, Dil Hai Betaab, Marsia Sad P […]
  • Mera Qalam Meri Soch Tujh Se Waabasta – Romantic Urdu Poetry جولائی 21, 2012
    MERA QALAM MERI SOCH TUJH SE WAABASTA – ROMANTIC URDU POETRY Mera qalam meri soch tujh se waabasta Meri to zeest ka her rang tujh se waabasta Lab pe jo phool they khushiyon k sab tere hi they Aaj is aankh k aansu b tujh se waabasta Hum kisi b rah pe chalen paas tere […]
  • Kabhi Khawabon Main Milain-Pakistani writers جولائی 12, 2012
    Kabhi Khawabon Main Milain-Pakistani writers Filed under: Pakistani writers Tagged: ahmed faraz, BEST URDU NOVELS, Female Writer, Ikhlaki Kahanian, Imran Series, Islamic Books, Islamic Duayen, Jasoosi Duniya, JASOOSI KAHANIAN, Jasoosi Novels, Mazhar Kaleem, Meri Pasand, My Collection, Night Fighter, Pakistani Writers, PARVEEN SHAKIR, Poetry Collection, roman […]
  • Ghazal-Sad Poetry جولائی 4, 2012
    Ghazal-Sad PoetryFiled under: Bazm-e-Adab, Meri Pasand, My Collection, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry, Poetry Collection, Poetry Urdu Magazine, ROMANTIC POETRY, Sad Poetry, Uncategorized, Urdu, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: ahmed faraz, Bazm-e-Adab, Female Writer, Ikhlaki Ka […]

%d bloggers like this: