Archive for نومبر, 2010

شیخ چلی سے انٹرویو

اسلام علیکم! آج میں آپ کی ملاقات ایک نہایت مشہور اور دلچسپ شخصیت سے کرواؤں گی.  آپ یقیناَ آج کی مہمان شخصیت سے مل کر بہت خوش ہوں گے. ‘ آئیےملتے ہیں آپ سب کے جانے پہچانے….جناب….شیخ چلی صاحب!….السلام علیکم شیخ صاحب!
(سامنےوالی کرسی پر شیخ چلی بیٹھا ہےجس نے پھٹے پرانےکپڑے پہن رکھے ہیں‘ بازئووں کےکف کھلے ہیں‘ شیو بڑھی ہوئی ہےاور قمیض کےگلےکا اوپر والا بٹن ٹوٹا ہوا ہے)
شیخ (سر ہلا کر سلام کا جواب دیتا ہے)
میں: شیخ صاحب….وعلیکم السلام تو کہیی….!!!
شیخ: (غصےسے) تم ضرور فضول خرچی کروانا….بھئی جب سر ہلانےسےکام چل جاتا ہےتو منہ گھِسانےسےفائدہ؟
میں: شیخ چلی صاحب….آپ اتنےکنجوس کیوں ہیں؟
شیخ: تم حاتم طائی ہو؟
میں: حاتم طائی تو نہیں ….لیکن کنجوس بھی نہیں ہوں.
شیخ: کنجوس کون ہوتا ہے؟
میں: بھئی کنجوس وہ ہوتا ہےجو بلاوجہ کی بچتیں کرتا رہتا ہے
شیخ: تم غلط کہہ رہی ہو.
میں: میں بالکل ٹھیک کہہ رہی ہوں.
شیخ: شرط لگا لو.
میں: اسلام میں شرط حرام ہے.
شیخ: یہ بھی غلط ہے.
میں: نعوذباللہ….یہ آپ کیا کہہ رہےہیں‘بھئی اسلام میں شرط لگانا حرام ہے۔
شیخ: کیا نماز کے لیے وضو شرط نہیں….حج کے لیے احرام شرط نہیں….شادی کے لیے نکاح شرط نہیں؟؟؟؟
میں: شیخ صاحب وہ یہ شرطیں نہیں ہیں جو آپ لگانے پر تلے ہوئے ہیں.
شیخ: بہرحال ….تم بےشک مجھےکنجوس کہتےرہو….میں کنجوس نہیں ہوں….بالکل بھی نہیں۔
میں: ابھی پتا چل جاتا ہے….یہ بتائیےکہ آپ نے کبھی کوئی پھل کھایا ہے.
شیخ: روزکھاتا ہوں۔
میں: ارے….کمال ہے….یعنی شیخ چلی ….اور روزانہ پھل….کون ساپھل کھاتےہیں آپ؟
شیخ: میں پورے دن میں صرف ایک روٹی کھاتا ہوں.
میں: روٹی پھل تو نہیں ہے جناب….
شیخ: پوری بات سن لو….چونگی کی طرح درمیان میں نہ آؤ….
میں: جی جی فرمائیں!!
شیخ: میں پورے دن میں صر ف ایک روٹی کھاتا ہوں اور باقی سارا دن صبر کرتا ہوں۔
میں: اور پھل؟
شیخ: لگتا ہے تم مسلمان نہیں یا تمہارا ایمان کمزور ہے.
میں: توبہ توبہ….یہ….یہ آپ کیا کہہ رہےہیں….الحمد للہ میں ایک پکی مسلمان ہوں۔
شیخ: تو پھر خود ہی بتاؤ کیا تم نےنہیں سنا کہ صبر کا پھل میٹھا ہوتا ہے….میں سارا دن صبر کرتا ہوں اور رات کو صبر کا میٹھا پھل کھاتا ہوں۔
میں: (حیرت سے) صبر کا پھل کیسا ہوتا ہے؟
شیخ: تم نےکھانا ہے؟
میں: ضرور ضرور….
شیخ تو پھر صبر کرو….!!!
میں: کمال ہے….اچھا شیخ چلی صاحب….یہ فرمائیے کہ آپ ہی کنجوس ہیں یا آپ کےخاندان میں کوئی اور بھی کنجوس گذرا ہے؟
شیخ: اللہ جنت نصیب کرے….دادا جان ہی کے نقش قدم پر تو ہم چل رہے ہیں
میں: وہ کس قسم کےکنجوس تھے….؟
شیخ: (آہ بھرتے ہوئے) ان کی بچت پرستی کا اندازہ اس بات سے لگا لیجئے کہ اپنی جوانی کےایام میں انہوں نے”ٹوتھ پکس“ ….سمجھتےہوناں ”ٹوتھ پکس“…. وہ جو دانت میں بوٹی پھنس جائے تو تنکا مارتےہیں….!!!
میں: جی جی….میں سمجھ رہی ہوں۔
شیخ: ہاں تو میں کہہ رہا تھا کہ دادا جان نے دس کلو جھاڑو کےتنکےاپنےسامنےکٹوا کر اپنےہر بچےکو پچاس پچاس ہزار تیلیاں دی تھیں‘ یقین کرو آج بھی میرےگھر میں وہی تیلیاں ٹوتھ پکس کے طور پر استعمال ہو رہی ہیں اور انشاءاللہ امید ہے چارپانچ سال تک مزید چلیں گی۔
میں: اوہ مائی گاڈ….واقعی؟
شیخ: یہ تو کچھ بھی نہیں….خالو جان کی وفات کا واقعہ سناؤں تو تم دم بخود رہ جاؤ….!!!
میں: پلیز پلیز….سنائیے!!!
شیخ: ہائےہائے….کیا یاد دلا دیا….مرحوم چھت پر بیٹھے آم چوس رہے تھے‘ اچانک گٹھلی آم میں سےنکل کر نیچےگٹر میں جا گری….خالو نےآؤ دیکھا نہ تاؤ….اوپر سےچھلانگ لگا دی اور سیدھےگٹر میں….پورےچار دن بعد ان کا جسدِ خاکی راوی سےبرآمد ہوا ….لیکن آفرین ہے کہ گٹھلی بہر حال ان کے ہاتھ میں دبی ہوئی تھی۔
میں: آ پ نےکبھی زندگی میں کوئی فضول خرچی بھی کی؟
شیخ: (کانوں کو ہاتھ لگاتےہوئے) ایک دفعہ کی تھی….اور یقین کرو لیاری میں شیخ یونین سےخارج ہوتے ہوتے بچا تھا۔
میں: (آنکھیں پھاڑتےہوئے) اچھا جی؟؟؟
شیخ: ہاں جی….ہوا یوں کہ میں نےخط کا لفافہ بند کرنے کے لیے ایک روپے کی گوند خرید لی….اوئے ہوئے ہوئے ہوئے….جیسے ہی نانا حضور کو پتا چلا ان کےتن بدن میں آگ لگ گئی….وہ شیخ یونین کےتاحیات صدر تھی….انہوں نےفوری طور پر میری اس فضول خرچی پر ایک ہنگامی میٹنگ کال کی اور گرج کر بولے….ابےشیخ چلی….تُو نےایک معمولی سا لفافہ جوڑنے کے لیےایک روپے کی خطیر رقم گوند پر خرچ کر دی‘ حالانکہ یہ کام باآسانی تھوک سے بھی کیا جا سکتا تھا….جا….آج سےتو ہم میں سےنہیں….!!!
میں: پھر….پھر کیا ہوا؟
شیخ: ہونا کیا تھا….میں فوری طور پر نانا حضور کے پاؤں پر گر گیا اور گڑگڑا کر اپنےبھیانک جرم کی معافی مانگنے لگا….اس پر انہوں نے مجھےحکم دیا کہ اب تمہاری سزا صرف اسی صورت میں معاف ہوسکتی ہےکہ تم بچت کا کوئی انوکھا طریقہ متعارف کراؤ۔
میں: پھر….آپ نےکیا کیا؟
شیخ: کرنا کیا تھا….ایک ایسی بچت کر کےدکھائی کہ نانا خوشی سےجھوم اٹھےاور مجھےشیخ یونین میں واپس لےلیا۔
میں: (حیرت سے)ایسا کیا کِیا آپ نے؟
شیخ: میں نےانہیں ایک روپے میں دس سال تک کا پرفیوم تیار کر کےدکھا دیا
میں: ایک روپےمیں دس سال تک کے لیے پرفیوم….یہ….یہ کیا کہہ رہےہیں….کیا ایسا ممکن ہے؟
شیخ (قہقہہ لگا کر) ہاں بیٹی….ممکن ہے….اور یاد رکھ….اسےکنجوسی نہیں….عقلمندی کہتے ہیں۔
میں: لیکن….لیکن یہ پرفیوم تیار کیسے ہوتا ہے؟
شیخ: کوئی مسئلہ ہی نہیں….ایک روپے کی دو اگربتیاں لو….ایک بالٹی پانی میں دونوں اگربتیاں پیس کر ڈال دو….دس سال کا پرفیوم تیار!!!
میں: (گہرا سانس لے کر) بہت اچھے….بھئی بہت اچھے….تو گویا آپ یہی پرفیوم استعمال کرتے ہیں۔
شیخ: بالکل….لیکن روز نہیں….صرف شادی بیاہ کے موقعوں پر….اور تمہیں پتا ہےاس پرفیوم کا سب سےبڑا فائدہ یہ ہے کہ اسےلگایا ہو تو بندہ رش میں سے بھی یوں گذر جاتا ہے جیسےمکھن میں سے بال….!!!
میں: (الجھےہوئےلہجےمیں) میں سمجھی نہیں….!!!
شیخ: میں سمجھاتا ہوں….دیکھو….جیسے ہی یہ پرفیوم لگا کر میں کہیں سےگذرتا ہوں….لوگ تیزی سےراستہ دینا شروع کر دیتے ہیں۔
میں: (غصے سے) بھئی آخر کیوں؟
شیخ (قہقہہ لگا کر میرے آگےہاتھ کرتا ہے) ابےوہ سمجھتےہیں شائد کوئی جنازہ آرہا ہے….!!!
میں: اچھا شیخ صاحب….آپ ماشاءاللہ اتنےعقل مند ہیں‘ آپ کی تعلیم کتنی ہے؟
شیخ: الحمد للہ….ایل ایل بی
میں: (آنکھیں پھاڑ کر) ایل ایل بی….
شیخ: جی….ایل ایل بی….یعنی….لنگر لوٹنے میں بےمثال
میں: (گہرا سانس لےکر)بڑی عجیب چیز ہیں آپ….اچھا ہمارے ناظرین کو یہ تو بتائیے کہ آپ زیادہ چلی میں کیوں رہتے ہیں؟
شیخ: چلی میں….ابےتُو گھاس تو نہیں کھا گئی….میرا نام اس لیےچلی نہیں کہ میں چلی میں رہتا ہوں۔
میں: (حیرت سے) تو پھر؟
شیخ: اصل میں مجھے ریڈ چلی….یعنی کہ سرخ مرچ بڑی پسند ہے….اسی لیے چلی مشہور ہو گیا ہوں۔
میں: اوہ….تو یہ بات ہی….ویسےآپ رہتےکہاں ہیں؟
شیخ: اسلام آباد میں!!!
میں: (حیرت سے) اسلام آباد میں….لیکن وہ تو بڑا مہنگا شہر ہی….آپ کیسےوہاں رہنا افورڈ کر لیتےہیں؟
شیخ: (قہقہہ لگا کر) ابے….سب سےزیادہ بچت ہی اسلام آباد میں ہوتی ہے۔
میں: یہ….یہ کیا کہہ رہےہیں آپ….اسلام آباد میں تو بڑے خرچے ہوتےہیں….اور آپ کہہ رہے ہیں کہ بچت ہوتی ہے.
شیخ: (منہ بنا کر)ایک تو تجھےہر چیز مثال دے کر سمجھانا پڑتی ہے….دیکھ….میرا ایک بھانجا ایم این اے ہے….ایک کیس میں پھنس گیا تھا‘ اوپر سےحکومت مخالف پارٹی میں تھا….بس….رگڑے پہ رگڑا….رگڑے پہ رگڑا….میں نےکہا ابے اسلام آباد میں رہائش رکھ اورپارٹی بدل لے….بس ….اُس نےمیری بات مان لی‘ اسلام آباد شفٹ ہوتے ہی پارٹی بدل لی….ایک منٹ میں اس کی ہر کیس سےبچت ہوگئی….!!!
میں: اوہو….میں پیسوں کی بچت کی بات کر رہی ہوں؟
شیخ: ابے گھامڑ ….اِس قصےمیں تجھے پیسوں کی کوئی بچت نظر نہیں آرہی؟
میں: (غصے سے)آپ مجھےگھامڑ نہیں کہہ سکتے
شیخ: باقی دنیا بےشک کہتی رہی؟
میں: (غصے سے) پلیز….آپ حد سےبڑھ رہے ہیں….آپ کو لڑکیوں سے بات کرنے کی تمیز نہیں ہے. میں آپ کےیہ سارےجملےکٹ کروا دوں گی۔
شیخ: ابےناراض نہ ہو….دیکھ غصےمیں بالکل مکی مائوس جیسی  لگ رہی ہے.
میں: آپ….آپ مجھےکارٹون کہہ رہےہیں….فوراً….فوراً سوری کریں
شیخ: اچھا بابا کر لیتا ہوں….(کیمرےکی طرف منہ کر کے) بھائی مکی مائوس تم جہاں بھی ہو میں تم سےسوری کرتا ہوں
میں: (غصےسےہاتھوں کی مٹھیاں بھینچتے ہوئے) شیخ صاحب….ریکارڈنگ کے بعد آپ کون سے راستے سے گھر جائیں گے؟
شیخ: جدھر سے بھی تم لےجاؤ؟
میں: میں لےجاؤں….کیا مطلب؟
شیخ: بھئی تم ہی مجھےانٹرویو کے لیے لائی تھی….تم ہی لےکر جاؤ گی.
میں: (منہ پر بدلے کے انداز میں ہاتھ پھیرتے ہوئے) ٹھیک ہے….ایسا لے کر جاؤں گی کہ آپ یاد کریں گے۔
شیخ: شکراً ….شکراً….!!!
میں: (گہرا سانس لے کر) یہ بتائیے کہ آپ کون سی چیز شوق سے کھاتے ہیں؟
شیخ: پہلے خیالی پلاؤ شوق سےکھاتا تھا….لیکن اماں کہتی ہیں روز روز چاول کھانے سے زکام ہو جاتا ہےاس لیے اب صرف شوق سےترس کھاتا ہوں۔
میں: اور پیتےکیا ہیں؟
شیخ: کبھی غصہ ….کبھی آنسو
میں: زندگی کا کوئی ایسا لمحہ جب آپ بہت پریشان ہوئےہوں؟
شیخ: ہائےہائے کم بخت کیا یاد دلا دیا….ایک دفعہ میں چاول کھا رہا تھا کہ چاول کا ایک دانہ زمین پر گر گیا….ہائے ہائے مت پوچھو میں نے کتنا تلاش کیا‘ لیکن نہیں ملنا تھا‘ نہ ملا….کیسےبتاؤں کہ میرا کیا حال ہوا‘ میں نےگھر جا کر ابا کو بتایا تو وہ یہ بھیانک حادثہ سنتے ہی سکتے میں آگئے….اور فوراً تین دن کےسرکاری سوگ کا اعلان کر دیا اور کہنےلگے….خبردار سوگ کے دنوں میں گھر میں کوئی کھانا وانا نہیں پکے گا….یقین کرو….پورے تین دن نیاز کی دال پر گذارا کرنا پڑا۔
میں: محسوس ہوتا ہےکہ آپ نے زیادہ تر بچت کی تربیت اپنے ابا سے لی ہے؟
شیخ: بالکل ٹھیک کہا تم نے….اصل میں ابا بچت کے چیمئپن تھے….بچپن میں ہم سب بچوں کو جمع کر لیتےاور بچت کےمختلف طریقے سمجھاتے….ابا نے قبل از مسیح کی ایک سائیکل رکھی ہوئی تھی جسےوہ گھر میں ہی چلاتے تھےاور پتا ہے کبھی پورا پیڈل نہیں گھماتےتھے.
میں: وہ کیوں ؟
شیخ بھئی وہ فرماتے تھےکہ جب آدھا پیڈل گھمانےسے سائیکل چل جاتی ہےتو پورا پیڈل گھسانےسےکیا فائدہ….اس سائیکل کےاصول انہوں نےبڑے سخت وضع کر رکھےتھے‘ میں نےکبھی اس کو مستری کی دوکان پر نہیں جاتےدیکھا‘ پنکچر ہوجاتی تھی تو ابا خود ہی آٹےکا پنکچر لگا دیا کرتےتھے‘ بعد میں ہوا بھرنے کےلیے زمین پر لیٹ جاتےاور سائیکل کے”وال“ کو منہ میں ڈال کر پوری قوت سے پھونکیں مارا کرتے تھے….ٹھیک ڈیڑھ گھنٹے بعد جب وہ اٹھتے تو ان کا چہرہ لال سرخ ہوتا اور وہ ہماری طرف فاتحانہ انداز میں دیکھ کر مسکرا تےاور کہتے….دیکھا….اسےکہتےہیں بچت!!!
میں: ماشاءاللہ….اللہ نظر نہ لگائے….آپ تو واقعی بڑی پہنچی ہوئی شخصیت ہیں….اچھا یہ بتائیےکہ آپ غصہ بھی کرتے ہیں؟
شیخ: بہت زیادہ ….ابھی دیکھیں ناں ….کل میرا چھوٹا بچہ بھاگتا ہوا آیا اور کہنے لگا بھوک لگی ہے….میں نے دو تھپڑ رسید کر دیئے۔
میں: یہ تو بڑی غلط بات ہے….بھوک لگنا کون سی برائی ہے….آپ نےاُس بیچارےکو کیوں مارا؟
شیخ:….میں بھوک کےخلاف نہیں ہوں….لیکن بندہ بار بار کھانا کھاتا اچھا لگتا ہے کیا؟؟
میں: تو کیا آپ کا بچہ پہلےکھانا کھا چکا تھا؟
شیخ: یار کم بخت نےدو دن پہلےپیٹ بھر کر کھایا تھا….مجھےتو سمجھ نہیں آتی کہ اس کا پیٹ ہے یا کنواں….!!!
میں: (گہرا سانس لےکر) موسیقی سےکچھ لگاؤ ہے؟
شیخ: نہیں یار….الو کا پٹھا سارا سارا دن گلی ڈنڈا کھیلتا رہتا ہے
میں: میں آپ کی بات کر رہی ہوں
شیخ: اوہ….سوری‘ میں سمجھا میرے بیٹے کی بات کر رہی ہو‘ہاں ہاں کیوں نہیں….مجھےتو موسیقی بہت پسند ہے۔
میں: کس قسم کے گانےسنتے ہیں؟
شیخ: صرف اور صرف بچت والے….!!!
میں: (حیرت سے) بچت والے….وہ کون سےگانے ہوتے ہیں؟
شیخ: (گنگنا کر) سونا نہ چاندی نہ کوئی محل تجھ کو میں دے سکوں گا……..!!!
میں: اور ناپسند کون سےگانےہیں؟
شیخ: جن میں فضول خرچی ہو!!!
میں: مثلاً….!!!
شیخ: (گنگنا کر)”تیری دو ٹکیا کی نوکری ….میرا لاکھوں کا ساون جائے….“
اور یہ والا….”نچ مجاجن نچ مجاجن….نچ مجاجن نچ….“
میں: نچ مجاجن میں کون سی فضول خرچی ہے جی؟
شیخ: تو نےکبھی کسی مجاجن کا ناچ دیکھا ہے؟
میں: (گھبرا کر) نن….نہیں؟
شیخ: کسی دن دیکھ….اور پھر آکر بتانا کہ کتنا خرچہ ہوا!!!
میں: شیخ چلی صاحب….آپ نےکبھی کوئی اپنےسےبھی دوگنا کنجوس دیکھا؟
شیخ: بھری پڑی ہے دنیا….میں تو کچھ بھی نہیں
میں: کوئی مثال دیجئے!!!
شیخ: دیکھ ایک مہربانی کر….یہ بار بار مجھے یہ نہ کہا کر کہ مثال دیجئے….مثال دیجئے….قسم خدا کی ایسا لگتا ہے جیسے میرے پلے سے کوئی چیز تجھے جا رہی ہے….!!!
میں: اوکےاوکے….میں احتیاط کروں گی….آپ اپنی بات کی وضاحت کیجئے!!
شیخ: (خوش ہوکر) ہاں….یہ ہوئی ناں بات….اصل میں یار یہاں بڑے بڑے کنجوس پڑے ہیں….ابھی عبدالستار ایدھی ہی کو دیکھ لو….ڈھنگ کی جوتی تک نہیں پہنتا….اور میں نےان کےایک انٹرویو میں پڑھا تھا کہ انہوں نے شادی کے بعد اپنی بیگم سےکہا تھا کہ ایک ہی صابن سارا سال استعمال کرنا ہے۔
میں: تمیز سےبات کیجئے….اور یاد رکھئے….ایدھی صاحب اس لیے سادہ رہتے ہیں کہ وہ ضرورت کی ساری چیزیں ضرورت مندوں میں بانٹ دیتے ہیں….ان جیسا خدا ترس انسان اور کون ہو گا۔
شیخ: اور اپنےمتعلق کیا خیال ہے؟
میں: کیا مطلب….میں کہاں سےکنجوس ہوگئی؟؟
شیخ: تم بالوں سےکنجوس لگتی ہو
میں: (حیرت سے) بالوں سے….وہ….وہ کیسےبھئی؟؟؟
شیخ مجھے نہیں لگتا کہ تم نےدو سال سے کوئی کنگھی خریدی ہو
میں: (غصے سے) کمال ہے….یہ میرا سٹائل ہےبھئی
شیخ: (قہقہہ لگا کر) تمہارا سٹائل….(پھر قہقہہ لگاتا ہے)
میں: اس میں ہنسنےوالی کون سی بات ہے؟
شیخ: (مسلسل ہنستے ہوئے) سٹائل….کمال ہے بھئی….سٹائل (مسلسل ہنستا ہے)
میں: (زچ ہوتےہوئے) دیکھیں….میں نےخود اپنےبال اس طرح رکھےہوئے ہیں۔
شیخ: (ہنستےہوئے) خود….ہاہاہاہاہا….یار یہ تم لوگ جو کام بھی خود سےکرتےہو‘ ہمیشہ الجھا ہوا کرتےہو۔
میں: میرے بالوں کو چھوڑئےاور آپ فرمائیے کہ آپکے کتنے بچے ہیں؟
شیخ: ماشاءاللہ ….چار درجن….!!!
میں: میں نے بچے پوچھے ہیں….انڈے نہیں!!!
شیخ: بتایا تو ہے….ماشاءاللہ چار درجن!!!
میں: بچوں کےمعاملے میں آپ نےاتنی فضول خرچی کیوں کی؟ اتنے بچوں کا خرچہ کیسے افورڈ کرتے ہیں آپ؟
شیخ: (قہقہہ لگا کر) ابے یہ فضول خرچی نہیں….بچت ہے….بہت بڑی بچت!!!
میں: (حیرت سے) بچت….لیکن وہ کیسی؟
شیخ: بھئی ہر بچےکو میں نے مختلف لنگروں پر لائن میں لگوایا ہوتا ہے….ماشاءاللہ ہر بچہ رات کو نت نئے کھانے لاتا ہے….کبھی آؤ ہمارے گھر….ایک وقت میں بیس بیس ڈشیں کھاتےہیں ہم ….!!!
میں: اس کا مطلب ہے بچے بھی آپ پر گئے ہیں؟
شیخ: (منہ بنا کر) ظاہری بات ہے مجھ پر ہی جانا تھا….کیا تیرےبچےتجھ پر نہیں؟؟؟
میں: (گھبرا کر) مم….میرا مطلب ہے….بچت میں آپ کے بچے بالکل آپ کی طرح ہیں۔
شیخ: الحمد للہ….ساری اولاد بچت ایکسپرٹ ہے….ابھی پچھلے ہفتےکی بات ہے‘ میرے پندھرویں بیٹے کےگٹر میں پانچ روپے گر گئے‘ اس نے دس روپے دےکر نکلوائے!!!
میں: واہ ….یہ ہوئی ناں بات….اچھا  صاحب یہ بتائیے کہ کبھی خدا کی راہ میں بھی کچھ دیتےچہیں؟
شیخ: دیکھو بھائی….ہر بندےکا خدا کی راہ میں دینےکا اپنا اپنا طریقہ ہوتا ہے….کچھ لوگ 100کمائیں تو 10اللہ کی راہ میں دے دیتے ہیں‘لیکن میرا اپنا سٹائل ہے….!!!
میں: ماشاءاللہ….کیاسٹائل ہےجی؟
شیخ: میں جتنےکماتا ہوں‘اوپر کی طرف پھینکتا ہوں‘ جتنےاُسےچاہیےہوتےہیں وہ رکھ لیتا ہے‘ باقی میں لے جاتا ہوں۔
میں: (گہرا سانس لےکر) یہ تو بتائیےکہ نہاتے کب کب ہیں؟
شیخ: (گہرا سانس لےکر) ….اپنی تو آدھی بارش میں گذر گئی….آدھی تیمم میں….!!!
میں: ایک بات کہوں….بُرا تو نہیں مانیں گے؟
شیخ:  یار پیسےنہ مانگ لینا….مجھے شک ہے کہ تم کوئی ایسی حرکت ضرور کرو گی….!!!
میں: کیا بات کر رہے ہیں….ایسی کوئی بات نہیں….میں تو یہ کہنا چاہ رہی تھی کہ شائد آپ کو علم نہیں کہ آپ کی قمیض کاایک بٹن ٹوٹا ہواہے.
شیخ: مجھےعلم ہے
میں: (حیرت سے) یعنی آپ کو علم ہے پھر بھی آپ نے نیا بٹن نہیں لگوایا
شیخ: اگلےمہینےکی 21 تاریخ کو لگوائوں گا
میں: 21 کو کیوں؟
شیخ: 21 کو کمیٹی نکلنی ہے
میں: اُف….اتنی بچت….بھئی ایک بٹن پر خرچہ ہی کتنا آتا ہے.
شیخ: اربوں روپے بھی آسکتا ہے….بشرطِ کہ بٹن ایٹم بم کا ہو.
میں: لیکن میں تو آپ کی قمیض کے بٹن کی بات کر رہی ہوں.
شیخ: بٹن کو اُدھر سےپکڑو یا اِدھرسے

….بات ایک ہی ہے

میں: (گہرا سانس لےکر) زندگی میں کبھی کسی کو خیرات بھی دی ؟
شیخ: ہاں….ایک دفعہ ایک فقیر کو روپیہ دیا تھا.
میں: سبحان اللہ….فقیر نےکیا کہا؟
شیخ خوش ہوکر بولا….مانگ کیا مانگتا ہے؟
میں: آپ نےکیا مانگا؟
شیخ: میں نےکہا….بھائی میرا روپیہ واپس کر دے.
میں: (گہرا سانس لےکر) خیرات بخشش کا ذریعہ ہوتی ہے….کر دیا کیجئے
شیخ: کرتا تو ہوں….لیکن لوگ سمجھیں تو تب ہے ناں….اسلامی اصولوں کےمطابق خیرات کروں ‘ تب بھی خوش نہیں ہوتے۔
میں: کیا آپ نےایسا کوئی عمل کیا ؟
شیخ: ہاں ہاں یار….دو مہینے پہلےمحلے کی مسجد والے مسجد کی تعمیر کےلیے چندہ لینے آئے‘ یقین کرو میں نےدس ہزار کا چیک کاٹ کر اسی وقت ان کےحوالےکر دیا۔
میں: سبحان اللہ….سبحان اللہ….کیا وسیع القلبی ہے.
شیخ: لیکن وہ پھر بھی اب تک ناراض ہیں.
میں: (حیرت سے) ناراض ہیں….کس لیے؟؟؟
شیخ: بھئی کہنے لگے چیک پر رقم تو لکھ دی ہے‘ اب دستخط بھی کر دیجئے….میں نے کہا بھائی میں نیکی کے کاموں میں نام نہیں ظاہر کرتا۔
میں: لاحول ولا قوہ….آپ کےدستخط کے بغیر چیک کیسے کیش ہو سکتا ہے.
شیخ: (لاپرواہی سے) یہ میرا مسئلہ نہیں….میں نےتو اپنی طرف سے پیسےدے دیے‘ اسلام میں ہے کہ خیرات ایسے دینی چاہیے کہ دوسرے ہاتھ کو خبر تک نہ ہو‘ اب اگر میں دستخط کر دیتا تو پتا نہیں کس کس کو خبر ہو جانی تھی۔
میں: کبھی خدانخواستہ کسی بیماری میں مبتلا ہوئے ہوں؟
شیخ: میں دل کا مریض ہوں….بیس تیس دفعہ بائیں ٹانگ میں ہارٹ اٹیک ہوچکا ہے۔
میں: ٹانگ میں ہارٹ اٹیک….بھئی آپ بھی کمال کرتے ہیں….ٹانگ میں ہارٹ اٹیک کیسےہوسکتا ہے؟
شیخ: مذاق نہ سمجھو ….ہماری بیماریاں ایسی ہی ہوتی ہیں….میرےپھوپھا کو دماغ میں موچ آگئی تھی….تایا کو گوڈے میں برین ہیمرج ہوگیا تھا….اور ماموں کی آنکھ میں ہیضہ ہو گیا تھا۔
میں: (آنکھیں پھاڑتےہوئے) یہ….یہ آپ کیا کہہ رہے ہیں….ایسا ….ایسا کیسےہوسکتا ہے؟
شیخ: ہوسکتا ہے….ہوسکتا ہے….اس دنیا میں کیا نہیں ہوسکتا
میں: عجیب بات ہے….دل نہیں مانتا
شیخ: ہوسکتا ہےتمہارے دل میں موچ آگئی ہو
میں: (چلا کر) دل میں موچ کیسےآسکتی ہے؟ آپ مجھے پاگل کر دیں گے!!!
شیخ: (حیرت سے) تو کیا تم پاگل نہیں ہو؟
میں: پہلےتو نہیں تھی لیکن اب لگتا ہے کہ ہوجاؤں گی….آپ تو مسلسل مجھے زچ کرنے پر تلے ہوئے ہیں‘ میں نے کتنی  دفعہ بتایا ہے کہ آپ کا انٹرویو ہو رہا ہے لیکن آپ تو سمجھتے ہی نہیں….!!!
شیخ: (معذرت خواہانہ لہجےمیں) چلو اب معافی دے دو….مجھےمعافی مانگنا بہت اچھا لگتا ہے۔
میں: (ٹھنڈا پڑتے ہوئے) معافی مانگنا بڑے ظرف کی بات ہوتی ہے
شیخ: لیکن مجھےمعافی مانگنا ظرف کی وجہ سےاچھا نہیں لگتا
میں: پھر؟
شیخ: اصل میں ”مانگنا“ ہماری خاندانی روایت ہے….!!!
میں: شیخ چلی صاحب….اگر آپ کے ہاتھ میں ملک کی باگ ڈور آجائےتو کیا کریں گے۔
شیخ: میں ”بھاگ کر دوڑ“ لگا دوں گا
میں: کیوں….حکومت میں آنےکی تو ہر کسی کی خواہش ہوتی ہے.
شیخ اصل میں‘ میں حکومت میںاس لیےبھی نہیں آنا چاہتا کہ میرا ”نون….قاف“ درست نہیں۔
میں: (حیرت سے) نون ….قاف….بھئی یہ نون قاف کا حکومت سےکیا تعلق اور ویسے بھی یہ لفظ شین قاف ہوتا ہے‘ نون قاف نہیں!!!
شیخ: حکومت میں آنے کے لیے شین قاف نہیں….نون قاف کی ضرور ت ہوتی ہے….کبھی نون حکومت میں آجاتا ہےاور کبھی قاف
میں: آپ کون سےوالے”قاف“ کی بات کر رہے ہیں
شیخ: بھئی قاف دو ہی ہوتےہیں….ایک قینچی والا….ایک تمہارےوالا….!!!
میں: (غصے سے) کیا مطلب….میرےوالا قاف کون سا ہوتا ہے؟؟؟
شیخ: اوہو ….بھئی تمہارا نام ہے کوئن….اب یہ جو کوئن میں قاف آتا ہی….یہ تمہارےوالا قاف نہیں ہے کیا؟؟؟
میں: اوہ….سوری….میں کچھ اور سمجھی تھی.
شیخ: (بڑبڑاتےہوئے) میرا بھی یہی مقصد تھا
میں: شیخ صاحب !اگر آپ کےپاس خدانخواستہ….اللہ نہ کری….دس کروڑ روپیہ آجائے تو آپ کیا کریں گے؟
شیخ: آدھا غریبوں میں بانٹ دوں گا
میں: ویری گڈ….اور اگر آپ کےپاس دس گاڑیاں ہوں تو؟
شیخ: آدھی غریبوں میں بانٹ دوں گا
میں: اور اگر دس جہاز ہوں تو؟
شیخ: آدھےغریبو ں کو دے دوں گا….!!!
میں: اور اگر دس کوٹھیاں ہوں تو؟
شیخ: آدھی فوراً غریبوں کےنام کر دوں گا
میں: ماشا ءاللہ….اوراگر آپ کےپاس دس مرغیاں ہوں تو؟
شیخ: (چونک کر) کیا کہا….دس مرغیاں….تو پھر میں ساری کی ساری اپنے ہی پاس رکھوں گا۔
میں: کمال ہےشیخ صاحب….دس جہاز ‘ دس کوٹھیاں‘ دس کروڑ اوردس گاڑیاں تو آپ آدھی غریبوں میں بانٹ دیں گے‘ جبکہ معمولی سی دس مرغیاں ساری اپنےپاس رکھیں گےآخر کیوں؟
شیخ: اس لیےکہ میرے پاس دس جہاز‘ دس کوٹھیاں‘ دس کروڑ اور دس گاڑیاں تو نہیں ہیں‘ البتہ دس مرغیاں گھر میں موجود ہیں۔
میں: (گہرا سانس لےکر) شیخ چلی صاحب….آپ آج ہمارےمہمان تھے‘ ناظرین کو کوئی پیغام دینا چاہیں گے؟
شیخ: میں یہی کہنا چاہوں گا کہ پیسوں میں کنجوسی ضرور کریں لیکن اپنی نفرتوں اور برائیوں میں بھی کنجوسی سےکام لیں‘ بڑا مزا آئے گا۔
ناظرین اس کےساتھ ہی اپنے میزبان کوئن کو اجازت دیجئےاگلے ہفتےپھر کسی مصیبت….مم میرا مطلب ہے شخصیت کے ساتھ حاضر ہوں گے۔ رب راکھا

نومبر 29, 2010 at 11:31 تبصرہ کریں

مزاحیہ اردو شاعری

 

نومبر 25, 2010 at 12:22 تبصرہ کریں

مُلا نصیرالدین کی حاضر جوابی

ایک بار بہت برف باری ہو رہی تھی. کافی ٹھنڈ ہو گئی تھی. مُلا نصیرالدین کے دوستوں نے کہا کہ اس سردی میں تو کوئی بھی زندہ نہیں رہ سکتا اور رات کا کوئی ایک لمحہ بھی باہر نہیں گزار سکتا. مُلا نصیرالدین نے کہا کہ میں رات گھر سےباہر کھلے آسمان کے نیچے گزاروں تو کیا تم میرے سب گھر والوں کی دعوت کرنے کو تیار ہو. سب دوستوں نے کہا کہ مُلا پاگل ہو گیا ہے بھلا ایسی سردی میں کون باہر رات گزار سکتا ہے. دوستوں نے کہا کہ اچھا موقع ہے مُلا اپنے آپ کو ہم سے زیادہ عقلمند سمجھتا ہے. چلو شرط لگا لیتے ہیں بیچارہ اپنی جان کے پیچھے پڑگیا ہے ..مُلا نے کہا کہ اگر میں شرط جیت گیا تو تم سب کو میرے گھر والوں کی دعوت کرنی ہو گی ورنہ میں تم سب کی دعوت کروں گا اگر شرط ہار گیا.

دوستوں نے کہا ہمیں منظور ہے.آخر وہ رات بھی آ گئی ملا قمیض شلوار میں گھر سے باہر جا بیھٹا. سب دوست اسکو ایک بند کمرے کی کھڑکی سے جھانک کر دیکھ رہے تھے. مُلا ساری رات سردی میں ٹہڑتا رہا آخر کوصبح ہو گئی..اب تو دوست بڑے حیران ہوئے اور کہا کہ ہم نہیں مان سکتے کہ ایسا ہو سکتا ہے. تم زندہ کیسے بچ سکتے ہو اس سردی میں تو ایک پل باہر نہیں رہا جا سکتا اور تم قیمض شلوار میں ساری رات بیھٹے رہے . مُلا نے کہا کہ بھئی تم سب شرط ہار گئے ہو اب بھاگو مت میری دعوت کرو. ایک دوست نے کہا کہ ملا تم جہاں تھے وہاں کوئی گرم چیز تھی کیا یاد کرو ملا نے کہا کہ نہیں کوئی چیز نہیں تھی. اب تم میری دعوت کرو..دوست نے کہا کہ یاد کروآس پاس کوئی ایسی چیز تھی.

ملا نے ذہن پر زور دیا اور کہا کہ ہاں یاد آیا جہاں میں بیھٹا تھا وہاں پر ایک کھڑکی میں موم بتی جل رہی تھی. مگر اتنی سی موم بتی سے کیا ہوتا ہے. اب تو دوستوں کے ہاتھ جیسے ملا کی کمزوری آ گئی. دوستوں نے کہا کہ ہاں جب ہی تو ہم بولیں کہ تم آخر بچ کیسے گئے. اس موم بتی کی گرمی کی وجہ سے تم شرط ہار گئے ہو. مُلا اب تم ھماری دعوت کرو ہم نے کہا تھا کہ تمہارے پاس کوئی گرم چیز نہیں ہو گی. مگر تم ساری رات ایک موم بتی کی گرمی میں زندہ رہے ..ملا سے کوئی جواب نہ بن سکا اگلے دن سب دوست ملا کے گھر دعوت میں جمع ہوئے. مُلا نے کہا کہ بیھٹو یاروں ابھی کھانا پک کر تیار ہو جاتا ہے دوست کافی دیر بیٹھے رہے اور انتظار کرتے رہے مگر کھانا نہیں آیا.

دوستوں نے کہا کہ مُلا ابھی کتنی دیر اور  ہے. مُلا نے کہا کہ بس تھوڑی دیر اور دوستوں نے کچھ دیر اور انتظار کیا جب کھانا نہیں آیا تو دوستوں نے کہا کہ تم ہم سب کو بیوقوف بنا رہے ہو بھلا کھانے میں اتنا ٹائم لگتا ہے. دکھاؤ ہم کو کھانا کہاں بن رہا ہے ہم بھی تو دیکھیں. مُلا سب کو اپنے باورچی خانے میں لے گیا دوستوں نے دیکھا کہ ایک بہت بڑا پیتلا رکھا ہوا ہے اور اس کے نیچے ایک موم بتی جل رہی ہے. دوستوں نے یہ دیکھا تو کہا کہ ابے مُلا کبھی اس موم بتی سے بھی کھانا بنتا ہے. پاگل تو نہیں ہو گیا کیا؟ مُلا نے کہا کہ جب موم بتی سے انسان بچ سکتا ہے تو کھانا نہیں بن سکتا. یہ بات سن کر سب دوست بہت شرمندہ ہوئے اور اگلے دن سب نے مُلا کےگھر والوں کی دعوت کی سب مُلا کی اس حاضر جوابی سے بڑے متاثر ہوئے…..

نومبر 22, 2010 at 08:21 تبصرہ کریں

عیدالاضحٰی کے لئے عید کارڈ

نومبر 15, 2010 at 12:03 تبصرہ کریں

ماہ ذی الحجہ کے اعما ل اور فضیلت

اطاعت وفرمانبردارى كے موسموں ميں سے ماہ ذوالحجہ كے پہلے دس يوم بھي ہيں جنہيں اللہ تعالى نے باقى سب ايام پر فضيلت دى ہے:
ابن عباس رضي اللہ تعالى عنہما بيان كرتے ہيں كہ رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
” ان دس دنوں میں کیے گئے اعمال صالحہ اللہ تعالی کو سب سے زيادہ محبوب ہیں ، صحابہ نے عرض کی اللہ تعالی کے راستے میں جھاد بھی نہيں !! تو رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اور جھاد فی سبیل اللہ بھی نہيں ، لیکن وہ شخص جواپنا مال اور جان لے کر نکلے اور کچھ بھی واپس نہ لائے ” صحیح بخاری ( 2 / 457 )
اور ايك دوسرى حديث ميں ہے ابن عباس رضي اللہ تعالى عنہ بيان كرتے ہيں رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
” عشرہ ذی الحجہ میں کیے گئے عمل سے زیادہ پاکیزہ اور زيادہ اجر والا عمل کوئي نہيں ، آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا گيا کہ نہ ہی اللہ تعالی کے راستے میں جھاد کرنا ؟ تورسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : اورنہ ہی اللہ تعالی کے راستے میں جھاد کرنا ” سنن دارمی ( 1 / 357 )
مندرجہ بالا اوراس کے علاوہ دوسری نصوص اس پر دلالت کرتی ہیں کہ ذوالحجہ کے پہلے دس دن باقی سال کے سب ایام سے بہتر اورافضل ہيں اوراس میں کسی بھی قسم کا کوئي استثناء نہيں حتی کہ رمضان المبارک کا آخری عشرہ بھی نہيں ، لیکن رمضان المبارک کے آخری عشرہ کی دس راتیں ان ایام سے بہتر اورافضل ہیں کیونکہ ان میں لیلۃ القدر شامل ہے ، اورلیلۃ القدر ایک ہزار راتوں سے افضل ہے ، تواس طرح سب دلائل میں جمع ہوتا ہے ۔
لھذا ہر مسلمان كو چاہئے كہ وہ ان دس دنوں كي ابتدا اللہ تعالى كے سامنے سچى اور پكى توبہ كے ساتھ كرے اور پھر عمومى طور پر كثرت سے اعمال صالحہ كرے اور پھر خاص كر مندرجہ ذيل اعمال كا خيال كرتے ہوئے انہيں انجام دے:
1 – روزے ۔
مسلمان شخص کےلیے نو ذوالحجہ کا روزہ رکھنا سنت ہے کیونکہ نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ان دس ایام میں اعمال صالحہ کرنے پر ابھارا ہے اور روزہ رکھنا اعمال صالحہ میں سے سب سے افضل اوراعلی کام ہے ، اوراللہ تعالی نے روزہ اپنے لیے چنا ہے جیسا کہ حدیث قدسی میں اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :
( ابن آدم کے سارے کے سارے اعمال اس کے اپنے لیے ہیں لیکن روزہ نہيں کیونکہ وہ میرے لیے ہے اورمیں ہی اس کا اجروثواب دونگا ) ، صحیح بخاری حدیث نمبر ( 1805 ) ۔
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم بھی نو ذوالحجہ کا روزہ رکھا کرتے تھے ، ھنیدہ بن خالد اپنی بیوی سے اور وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی کسی زوجہ محترمہ سے بیان کرتی ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زوجہ محترمہ نے بیان کیا : نبی صلی اللہ علیہ وسلم نو ذوالحجہ اور یوم عاشوراء اور ہر ماہ تین روزے رکھا کرتے تھے ، مہینہ کے پہلے سوموار اوردو جمعراتوں کے ۔
سنن نسائي ( 4 / 205 ) سنن ابوداود ، علامہ البانی رحمہ اللہ تعالی نے صحیح ابوداود ( 2 / 462 ) میں اسے صحیح قرار دیا ہے ۔
2 – تکبیریں، الحمد اللہ اور سبحان اللہ كثرت سے کہنا :
ان دس ایام میں مساجد ، راستوں اورگھروں اورہر جگہ جہاں اللہ تعالی کا ذکر کرنا جائز ہے وہیں اونچی آواز سے تکبیریں اور لاالہ الااللہ ، اور الحمدللہ کہنا چاہیے تا کہ اللہ تعالی کی عبادت کا اظہار اوراللہ تعالی کی تعظیم کا اعلان ہو ۔ مرد تو اونچي آواز سے کہيں گے لیکن عورتیں پست آواز میں ہی کہيں ۔
اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :
{ اپنے فائدے حاصل کرنے کوآ جائيں ، اوران مقرر دنوں میں ان چوپایوں پراللہ تعالی کا نام یاد کریں جوپالتوہیں } الحج ( 28 ) ۔
جمہورعلماء کرام کا کہنا ہے کہ معلوم دنوں سے مراد ذوالحجہ کے دس دن ہیں کیونکہ ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما سے مروی ہے کہ ایام معلومات سے مراد دس دن ہیں ۔
عبد اللہ بن عمر رضي اللہ تعالى عنہما بيان كرتے ہيں كہ نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
” اللہ تعالى كے ہاں ان دس دنوں سے عظيم كوئى دن نہيں اور ان دس ايام ميں كئے جانے والے اعمال سے زيادہ كوئي عمل محبوب نہيں، لھذا لاالہ الا اللہ، اور سبحان اللہ ، اور تكبيريں كثرت سے پڑھا كرو” اسے امام احمد نے روايت كيا ہے اور اس كي سند كو احمد شاكر رحمہ اللہ نے صحيح قرار ديا ہے
اورتکبیر کے الفاظ یہ ہیں :
الله أكبر ، الله أكبر لا إله إلا الله ، والله أكبر ولله الحمد
اللہ بہت بڑاہے ، اللہ بہت بڑا ہے ، اللہ تعالی کےعلاوہ کوئي معبود برحق نہيں ، اوراللہ بہت بڑا ہے ، اوراللہ تعالی ہی کی تعریفات ہیں ۔
اس کےعلاوہ بھی تکبیریں ہیں ۔
یہاں ایک بات کہنا چاہیں گے کہ موجود دورمیں تکبریں کہنے کی سنت کوترک کیا جاچکا ہے اورخاص کران دس دنوں کی ابتداء میں تو سننے میں نہیں آتی کسی نادر شخص سے سننے میں آئيں گیں ، اس لیے ضروری ہے کہ تکبیروں کواونچی آواز میں کہا جائے تاکہ سنت زندہ ہوسکے اورغافل لوگوں کو بھی اس سے یاد دہانی ہو۔
ابن عمر اور ابوھریرہ رضي اللہ تعالی عنہما کے بارے میں ثابت ہے کہ وہ دونوں ان دس ایام میں بازاروں میں نکل کر اونچی آواز کے ساتھ تکبیریں کہا کرتے تھے اورلوگ بھی ان کی تکبیروں کی وجہ سے تکبیریں کہا کرتے تھے ، اس کا مقصد اورمراد یہ ہے کہ لوگوں کوتکبریں کہنا یاد آئيں اور ہرایک اپنی جگہ پر اکیلے ہی تکبریں کہنا شروع کر دے ، اس سے یہ مراد نہيں کہ سب لوگ اکٹھے ہوکر بیک آواز تکبیریں کہيں کیونکہ ایسا کرنا مشروع نہيں ہے
اورجس سنت کوچھوڑا جا چکا ہو یا پھر وہ تقریبا چھوڑی جا رہی ہو تواس پرعمل کرنا بہت ہی عظیم اجروثواب کا ذریعہ ہے. کیونکہ نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان بھی اس پردلالت کرتا ہے :
( جس نے بھی میری مرد سنت کو زندہ کیا اسے اس پر عمل کرنے والے کے برابر ثواب دیا جائے گا اوران دونوں کے اجروثواب میں کچھ کمی نہيں ہوگي ) اسے امام ترمذی رحمہ اللہ تعالی نے روایت کیا ہے.
3 – حج وعمرہ کی ادائيگي :
ان دس دنوں میں جوسب سے افضل اوراعلی کام ہے وہ بیت اللہ کاحج وعمرہ کرنا ہے ، لھذا جسے بھی اللہ تعالی اسے اپنے گھرکا حج کرنے کی توفیق عطا فرمائے اوراس نے مطلوبہ طریقہ سے حج کے اعمال ادا کیے توان شاء اللہ اسے بھی اس کا حصہ ملے گا جونبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے اس فرمان میں بیان کیا ہے :
( حج مبرور کا جنت کے علاوہ کوئي اجروثواب نہيں ) ۔
4 – قربانی :
عشرہ ذی الحجہ کے اعمال صالحہ میں قربانی کے ذریعہ اللہ تعالی کا تقرب حاصل کرنا بھی شامل ہے کہ قربانی کی جائے اوراللہ تعالی کےراستے میں مال خرچ کیا جائے ۔
لھذا ہميں ان فضيلت والے ايام سے فائدہ اٹھانا چاہئے يہ ہمارے لئے بہترين اور سنہري موقع ہے، قبل اس كے كہ ہم اپنى كوتاہى پر نادم ہوں، اور قبل اس كے كہ ہم واپس دنيا ميں آنے كا سوال كريں ليكن اس كي شنوائى نہ ہو.

نومبر 11, 2010 at 10:04 2 comments

قربانی کے مسائل

قربانی ہر صاحب نصاب بالغ مرد و عورت پر فرض ہے۔ زکوٰۃ کی فرضیت کے لیے کم از کم نصاب پر پورا قمری سال یا سال کا اکثر حصہ گزرنا شرط ہے، جب کہ قربانی اور فطرانے کی فرضیت  کے لیے بالترتیب عیدالاضحیٰ اور عید الفطر کی صبح صادق کو محض کم از کم نصاب کا مالک ہونا کافی ہے، سال گزرنا شرط نہیں ہے۔
٭ قربانی کے جانور کم از کم حسب ذیل عمر کے ہونے چاہئیں:
٭ اونٹ، اونٹنی= پانچ سال
٭ گائے و بیل= دو سال
٭ بھینس و بھینسا = دو سال
٭بکرا و بکری، بھیڑ و دنبہ=ایک سال
البتہ بھیڑ اور دنبہ اگر اتنے فربہ ہوں کہ دیکھنے میں ایک سال کے نظر آئیں تو ان کی قربانی جائز ہے۔
٭ اگر صاحب نصاب مال دار شخص نے قربانی کا جانور خریدا اور وہ گم ہوگیا یا قربانی سے پہلے مرگیا تو اس پر لازم ہے کہ دوسرا جانور خرید کر قربانی دے یا قربانی کے جانور میں حصہ ڈالے۔ اگر قربانی سے پہلے گم شدہ جانور مل جائے تو مالدار شخص کو اختیار ہے کہ جس جانور کی چاہے قربانی دے، دونوں کی قربانی لازمی نہیں ہے۔
٭ اگر نادار شخص نے قربانی کا جانور خریدا اور وہ قربانی سے پہلے گم ہوگیا یا مرگیا، تو اس پر دوسرے جانور کی قربانی لازم نہیں ہے۔ اگر اس نے دوسرا جانور خرید لیا تو اس پر دونوں کی قربانی لازم ہو گی۔ کیونکہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے تو اُس پر ایک بھی واجب نہیں ہے، جب اُس نے قربانی کی نیت سے جانور خرید لیا تو وہ قربانی کے لیے متعین ہوگیا اور اس کی قربانی واجب ہوگی، اسی طرح دوسرے جانور کا حکم ہے۔
٭ قربانی کے جانوروں کی عمر پورا ہونے کی ظاہری علامت ثَنِّی (دو دانت کا) ہونا ہے، لہٰذا کھیرا جانور یعنی جس کے سامنے کے دو دانت ابھی نہیں گرے، اسے قربانی کے لیے نہیں خریدنا چاہیے۔ البتہ جانور گھر کا پلا ہوا ہے یا کسی دیانت دار، قابل اعتماد شخص کے پاس ہے اور اس کی مطلوبہ عمر پوری ہوگئی ہے تو اس کی قربانی شرعاً جائز ہے، خواہ سامنے کے دو دانت ابھی نہ گرے ہوں، عام کاروباری لوگوں پر اعتماد کرنا مشکل ہے۔
٭ قربانی کا جانور تمام ظاہری عیوب سے پاک ہونا چاہیے۔ اس سلسلہ میں فقہائے کرام نے یہ ضابطہ مقرر کیا ہے کہ ہر وہ عیب جو کسی منفعت اور جمال کو بالکل ضائع کردے، اس کی وجہ سے قربانی جائز نہیں ہے اور جو عیب اس سے کم تر درجے کا ہو، اس کی وجہ سے قربانی ناجائز نہیں ہوتی۔
٭ جو جانور اندھا کانا یا لنگڑا ہو، بہت بیمار اور لاغر، جس کا کوئی کان، دم یا چکتی تہائی سے زیادہ کٹے ہوئے ہوں، پیدائشی کان نہ ہوں، ناک کٹی ہو، دانٹ نہ ہوں، بکری کا ایک تھن یا گائے بھینس کے دو تھن خشک ہوں، ان سب جانوروں کی قربانی جائز نہیں ہے۔
٭ جس جانور کے پیدائشی سینگ نہ ہوں، یا سینگ اوپر سے ٹوٹا ہوا ہے، کان، چکتی یا دم ایک تہائی یا ا س سے کم کٹے ہوئے ہیں تو ایسے جانوروں کی قربانی جائز ہے۔
٭ قربانی کے جانور کے سینگ جانور میں حسن پیدا کرنے کے لیے سر کے اوپر سے توڑ دیے ہیں اور ان کا بڑا ہونا رک گیا ہے، لیکن سر یا دماغ کے اندر تک جڑ کو نہیں نکالا، نہ ہی اس سے جانور کے دماغ پر کوئی اثر ہوا ہے اور پوری طرح صحت مند ہے تو اس کی قربانی جائز ہے۔
٭ صاحب نصاب نے عیب دار جانور خریدا یا خریدتے وقت بےعیب تھا بعد میں عیب دار ہوگیا تو ان دونوں صورتوں میں اس کے لیے ایسے جانور کی قربانی جائز نہیں ہے اس کے لیے ضروری ہے کہ دوسرا بےعیب جانور خریدے اور قربانی کرے اور اگر خدانخواستہ ایسا شخص صاحب نصاب نہیں ہے تو دونوں صورتوں میں اس جانور کی قربانی کرسکتا ہے۔
٭ خصی جانور کی قربانی آنڈو کے بہ نسبت افضل ہے کیونکہ اس کا گوشت زیادہ لذیذ ہوتا ہے، اگر گائے کے ساتویں حصے کی قیمت بکری سے زیادہ ہو تو وہ افضل ہے اور اگر قیمتیں برابر ہوں تو بکری کی قربانی افضل ہے، کیونکہ بکری کا گوشت زیادہ لذیذ ہوتا ہے۔
٭ بکرا بکری، بھیڑ دنبے کی قربانی صرف ایک فرد کی طرف سے ہوسکتی ہے۔ اونٹ گائے وغیرہ میں زیادہ سے زیادہ سات افراد شریک ہوسکتے ہیں۔ شرط یہ ہے کہ سب کی نیت تقریب یعنی عبادت اور حصول اجر و ثواب کی ہو۔ سات سے کم افراد بھی ایک گائے کی قربانی میں برابر کے حصے دار ہوسکتے ہیں، مثلاً چھ یا پانچ یا چار یا تین یا دو حتی کہ ایک آدمی بھی پوری گائے کی قربانی کر سکتا ہے، سات حصے داروں کا ہونا ضروری نہیں ہے۔
٭ سات افراد نے مل کر قربانی کا جانور خریدا، بعد ازاں قربانی سے پہلے ایک حصے دار کا انتقال ہوگیا اگر مرحوم کے سب ورثاء باہمی رضا مندی سے یا کوئی ایک وارث یا چند ورثاء اپنے حصۂ وراثت میں سے اجازت دے دیں تو استحساناً اس کی قربانی کی جاسکتی ہے، اپنی واجب قربانی ادا کرنے کے بعد اللہ توفیق دے تو رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ اقدس کے ایصالِ ثواب کی نیت سے قربانی کرنا افضل ہے اور کرنے والے کو نہ صرف پورا اجر و ثواب ملے گا بلکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت سے اس کی قبولیت کا بھی یقین ہے۔
٭ شریعت مطہرہ کی رو سے ہر عاقل و بالغ مسلمان مرد و عورت اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں اپنے اعمال کا جواب دہ ہے، لہٰذا اگر کسی مشترکہ خاندان میں ایک سے زیادہ افراد صاحب نصاب ہیں تو سب پر فرداً فرداً قربانی واجب ہے، محض ایک کی قربانی سب کے لیے کافی نہیں ہوگی، بلکہ تعین کے بغیر ادا ہی نہیں ہوگی۔
٭ گائے کی قربانی میں ’’عقیقہ‘‘ کا حصہ بھی ڈال سکتے ہیں۔ بہتر یہ ہے کہ لڑکے کے لیے دو حصے ہوں اور لڑکی کے لیے ایک حصہ، اگر دو حصوں کی استطاعت نہ ہو تو لڑکے کے لیے ایک حصہ بھی ڈالا جاسکتا ہے۔
٭ قربانی کے جانور نے ذبح سے پہلے بچہ دے دیا یا ذبح کرنے کے بعد پیٹ سے زندہ بچہ نکلا تو دونوں صورتوں میں یا تو اسے بھی قربان کردیں یا زندہ صدقہ کردیں یا فروخت کرکے اس کی قیمت صدقہ کردیں، اگر بچہ مردہ نکلے تو اسے پھینک دیں قربانی ہر صورت میں صحیح ہے۔
٭ ذبح کرتے وقت قربانی کا جانور اچھلا کودا اور اس میں کوئی عیب پیدا ہوگیا، یا ذبح ہوتے ہوئے اُٹھ کر بھاگا اور وہ عیب دار ہوگیا تو اسے اُسی حالت میں ذبح کردیں قربانی ہوجائے گی۔
قربانی کے گوشت کی تقسیم:
٭ افضل یہ ہے کہ قربانی کے گوشت کے تین حصے کیے جائیں۔ ایک حصہ ذاتی استعمال کے لیے، ایک حصہ اعزاء و اقرباء اور احباب کے لیے اور ایک حصہ فقراء اور ناداروں پر صرف کیا جائے۔ سارا گوشت رضائے الٰہی کے لیے مستحقین کو دے دینا عزیمت اور اعلیٰ درجے کی نیکی ہے۔ اور بصورت ضرورت شدیدہ کل یا اکثر گوشت ذاتی استعمال میں لانے کی بھی رخصت و اجازت ہے، لیکن یہ روح قربانی کے منافی ہے۔
نوٹ: شریعت کے مطابق ذبح کیے ہوئے حلال جانور کے مندرجہ ذیل اعضاء کھانے منع ہیں۔ دم مسفوخ (ذبح کے وقت بہنے والا خون)، ذکر (نر جانور کا آلۂ تناسل) گائے، بکری کے پیشاب کی جگہ (فرج)، خصیتین (کپورے)، مثانہ، دبر(جانور کے پاخانے کی جگہ)، حرام مغرز، اوجھڑی اور آنتیں ان میں دمِ مسفوح حرام قطعی اور باقی مکروہِ تحریمی ہیں۔
قربانی کا وقت
٭ قربانی کا وقت 10 ذی الحجہ کی صبح صادق سے لے کر 12 ذی الحجہ کے غروب آفتاب تک ہے۔ گیارہویں اور بارہویں شب میں بھی قربانی ہوسکتی ہے، مگر رات کو ذبح کرنا مکروہ ہے۔ ایسے دیہات اور قصبات جہاں عید کی نماز پڑھی جاتی ہے، وہاں نمازِ عید سے پہلے قربانی جائز نہیں ہے۔
(ذبح کا طریقہ)
قربانی کرتے وقت جانور بائیں پہلو پر قبلہ رُخ لٹائیں اور خود ذبح کریں یا کسی سے ذبح کرائیں، چھری تیز ہو اور کم از کم تین رگیں کاٹنی چاہئیں۔
ذبح سے پہلے کی دعا
اِنِّی وَجَّھْتُ وَجْھِیَ لِلَّذِیْ فَطَرَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ عَلیٰ مِلَّۃِ اِبْرَاھِیْمَ حَنِیْفًا وَّمَا اَنَا مِنَ الْمُشْرِکِیْنَ o اِنَّ صَلَاتِیْ وَنُسُکِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِیْ لِلہِ رَبِّ الْعَالَمِیْنَ o لَا شَرِیْکَ لَہ وَبِذَالِکَ اُمِرْتُ وَاَنَا مِنَ الْمُسْلِمِیْنَo اَللّٰھُمَّ مِنْکَ وَلَکَ عَنْ (فُلَانٍ اور فُلَانَۃٍ۔ (جس کی قربانی ہے، اس کا نام لیں اور گائے کی قربانی ہو تو سب شرکاء کا نام لیں) پھر بلند آواز سے بِسْمِ اللہِ وَاللہُ اَکْبَرُ پڑھ کر ذبح کردیں اور ذبح میں چاروں یا کم از کم تین رگیں کٹنی چاہئیں۔
ذبح کے بعد کی دعا
اَللّٰھُمَّ تَقَبَّلْ مِنِّیْ کَمَا تَقَبَّلْتَ مِنْ خَلِیْلِکَ اِبْرَاھِیْمَ عَلَیْہِ السَّلَامُ وَحَبِیْبِکَ مُحَمَّدٍ صلی اللہ علیہ وسلم
اگر دوسرے کی طرف سے ہو تو ’’مِنِّی ‘‘ کی جگہ ’’مِنْ فُلَانٍ‘‘ (اس شخص کا نام ) لیں، اگر گائے و اونٹ وغیرہ ہو تو تمام شرکاء قربانی کے نام لیں۔
عقیقہ کی دعا لڑکے کے لیے
اَللّٰھُمَّ ھٰذِہ عَقِیْقَۃُ فُلَان بن فُلَان دَمُھَا بِدَمِہ وَلَحْمُھَا بِلَحْمِہ وَعَظْمُھَا بِعَظْمِہ وَجِلْدُھَابِجِلْدِہ وَشَعْرُھَا بِشَعْرِہ، اَللّٰھُمَّ اجْعَلُھَا فِدَاءً لَّہ مِنَ النَّارِ، بِسْمِ اللہِ واللہ اَکْبَرُ۔
ترجمہ: ’’اے اللہ یہ فلاں بن فلاں (یعنی لڑکے اور اس کے والد کا نام لیں) کا عقیقہ ہے، اس کی جان کو اس کی جان کے لیے، اس کے گوشت کو اس کے گوشت کے لیے، اس کی ہڈی کو اس کی ہڈیوں کے لیے، اس کی جلد کو اس کی جلد کے لیے، اس کے بال اس کے بالوں کے لیے صدقہ ہیں، اے اللہ! اسے جہنم سے نجات کے لیے اس کا فدیہ بنادے اور پھر بسم اللہ اللہ اکبر کہہ کر چھری پھیردے۔
عقیقہ کی دعا لڑکی کے لیے
اَللّٰھُمَّ ھٰذِہ عَقِیْقَۃُ فُلَانۃ بنت فُلَان دَمُھَا بِدَمِھَا وَلَحْمُھَا بِلَحْمِھَا وَعَظْمُھَا بِعَظْمِھَا وَجِلْدُھَابِجِلْدِھَا وَشَعْرُھَا بِشَعْرِھَا، اَللّٰھُمَّ اجْعَلُھَا فِدَاءً لَھَا مِنَ النَّارِ، بِسْمِ اللہِ واللہ اَکْبَرُ۔
ترجمہ: ’’اے اللہ یہ فلانہ بنت فلاں (یعنی لڑکی اور اس کے والد کا نام لیں) کا عقیقہ ہے، اس کی جان کو اس کی جان کے لیے،اس کے گوشت کو اس کے گوشت کے لیے، اس کی ہڈی کو اس کی ہڈیوں کے لیے، اس کی جلد کو اس کی جلد کے لیے، اس کے بال اس کے بالوں کے لیے صدقہ ہیں، اے اللہ! اسے جہنم سے نجات کے لیے اس کا فدیہ بنادے اور پھر بسم اللہ اللہ اکبر کہہ کر چھری پھیر دے۔
تکبیرات تشریق
9 ذو الحجہ کی نمازِ فجر سے 13 ذو الحجہ کی نماز عصر تک ہر باجماعت نماز کے بعد ایک مرتبہ بلند آواز سے یہ تکبیر کہنا واجب ہے اور تین مرتبہ کہنا افضل ہے۔ عیدگاہ آتے اور جاتے بھی بہ آوازِ بلند یہ تکبیر کہنا چاہیے۔ اَللہُ اَکْبَرُ اَللہُ اَکْبَرُ لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہُ وَاللہُ اَکْبَرُ، اَللہُ اَکْبَرُ وَلِلہِ الْحَمْدُ O
قربانی کی کھال
قربانی کے جانور کی کھال قصاب کو اجرت میں دینا جائز نہیں ہے، کھال بیچ کر اس کی قیمت صدقہ کردیں یا کسی نادار مستحق کو شخصی طور پر بھی دی جاسکتی ہے، لیکن دینی اداروں کو دینا افضل ہے، کیونکہ یہ تبلیغ و اشاعت دین کے کام میں اعانت بھی ہے اور صدقۂ جاریہ بھی ہے۔

نومبر 8, 2010 at 05:29 1 comment

جھنگا پہلوان ریفری بنے

چیلنج گراؤنڈ پر فٹ بال کے مقابلے ہو رہے تھے۔ سارا شہر ان مقابلوں کو دیکھنے کے لئے امڈا ہوا تھا ۔اور ہر کوئی رات میں یا دن میں ہوئے فٹ بال کے میچوں اور ان میچوں میں کھیلنے والے کھلاڑیوں کا ذکر کرتا تھا ۔
جھنگا پہلوان بھی کئی دنوں سے فٹبال کے چرچے سن رہے تھے ۔اس سے قبل انہیں کبھی میچ دیکھنے کا اتفاق نہیں ہوا تھا۔ صرف ٹی وی پہ کبھی کبھی چینل تبدیل کرتے ہوئے انہوں نے فٹ بال دیکھا تھا۔ اس وجہ سے اس کھیل کے صحیح خدوخال اور اصول و ضوابط سے واقف نہیں تھے۔
اس لئے ان کے دل میں آیا کہ کیوں نہ آج فٹ بال کے مقابلے دیکھے جائیں۔ انہوں نے اپنے خاص الخاص للو کو ساتھ لیا اور چیلنج گراؤنڈ کی طرف چل دیئے۔ راستے میں جو بھی ملتا ان سے کہتا۔
’’ارے واہ پہلوان ۔ آپ بھی فٹ بال دیکھنے جا رہے ہیں؟‘‘
’’یہ پہلوانی کے ساتھ ساتھ فٹ بال کا شوق کب سے ہو گیا ؟‘‘
’’پہلوان کیا فٹ بال مقابلوں کی ٹیم کی طرف سے کھیلنے کا ارادہ ہے؟‘‘ جھنگا پہلوان ان کی ان باتوں کا کیا جواب دیتے صرف مسکرا کر آگے بڑھ جاتے۔
للو فٹ بال کی تعریف کیئے جا رہا تھا۔
’’ استاد دنیا میں سب سے زیادہ کھیلا جانے والا کھیل فٹ بال ہے ساری دنیا میں کھیلا جاتا ہے کرکٹ تو آٹھ دس ممالک سے زیادہ ملکوں میں کوئی جانتا بھی نہیں۔ لیکن فٹ بال تارک افریقہ کے گھنے جنگلوں میں بھی افریقہ کے وحشی جنگلی قبائل کھیلتے ہیں اور تو اور دنیا کی ایک قوم جس کو دنیا کے کسی کھیل میں کوئی دلچسپی نہیں وہ بھی اس کھیل کو کھیلتی ہے۔‘‘
’’بھئی وہ کون سی قوم ہے جسے دنیا کے کسی کھیل میں دلچسپی نہیں لیکن وہ بھی فٹ بال کھیلتے ہیں؟‘‘ جھنگا پہلوان نے حیرت سے پوچھا۔
’’ عرب قوم ، عرب لوگ بھی فٹ بال کھیلتے ہیں۔‘‘ للو نے کہا اور ہنسنے لگا جیسے اس نے کوئی بہت مزیدار لطیفہ سنایا ہو۔
چیلنج کے گراؤنڈ میں پہونچ کر گراؤنڈ کے انچارج ولاس راؤ نے ان کا پرتباک انداز میں استقبال کیا۔’’ ارے جھنگا پہلوان جی، آئیے۔ آئیے۔ آج ہمارے گراؤنڈ کی تقدیر جاگی آُپ کے قدم اس گراؤنڈ پر پڑے۔‘‘ ولاس بولا۔
’’ہاں بھئی، سارے شہر میں اس گراؤنڈ پر چل رہے فٹ بال مقابلوں کا شور ہے سوچا آج فٹ بال کے مقابلے دیکھتے ہیں۔‘ ‘ جھنگا نے جواب دیا۔
’’ آپ فٹ بال کے مقابلے صرف دیکھئے نہیں ، بلکہ ان میں شامل بھی ہو جائیے۔ ‘‘ ولاس بولا۔
’’ کیا مطلب ؟‘‘ جھنگا پہلوان اس کا منہ دیکھنے لگا۔
’’ فٹ بال کے جو مقابلے ہو رہے ہیں ہم ان مقابلوں کا ریفری شہر کی کسی معتبر نامور سردکردہ شخصیت کو بناتے ہیںَ تا کہ ان کی عزت افزائی بھی ہو اور ان کی فٹ بال میں دلچسپی بھی بڑھے۔ آپ بھی شہر کی مشہور و معروف شخصیتوں میں شامل ہیں۔ اس لیے آپ کو بھی اگلے میچ کا ریفری بنایا جاتا ہے۔‘‘ ولاس بولا۔
’’میچ کا ریفری اور میں ؟‘‘ پہلوان گھبرا گئے،’’ مجھے تو فٹ بل کی اے بی سی بھی نہیں آتی پھر میں بھلا میچ ریفری کس طرح بن سکتا ہوں۔‘‘
’’اب تک شہر کی جن ہستیوں نے یہ فرائض انجام دیئے وہ بھی اس کام کو کب جانتے تھے۔ کام کرتے کرتے سیکھ گئے۔ آسان سا کام ہے۔ کھلاڑیوں کے فاؤل پر نظر رکھنا ہے۔ ان کے فاؤل پر فری کک، پینلٹی کک، کارنر وغیرہ دینا ہے۔ اور کوئی کھلاڑی زیادہ ہی فاول کریں یا خطرناک طور پر فٹ بال کھیلیں تو سزا کے طور پر انہیں یلو کارڈ، ریڈ کارڈ وغیرہ بتا کر میچ سے باہر کردیں۔‘‘ ولاس نے فٹ بال کے ریفری کے سارے فرائض جھنگا پہلوان کو سمجھا دئیے۔
’’ اگر صرف یہی کام کرنا ہے تو یہ میرے بائیں ہاتھ کا کام ہے‘‘، جھنگا پہلوان نے دل ہی دل میںسوچا اور وہ میچ میں ریفری بننے کے لئے تیار ہو گئے۔ اگلا میچ ایگل اور آزاد ہند ٹیموں کے درمیان تھا۔
ٹیمیں میچ کھیلنے کے لئے میدان میں اتریں تو ان کے ساتھ جھنگا پہلوان کو بھی سیٹی اور ضروری کارڈ دیکر میدان میں ریفری کے فرائض انجام دینے کے لئے اتار دیا گیا۔ لیکن وہاں سب سے بڑی مشکل جھنگا پہلوان کی لنگی نے کھڑی کر دی۔
ان سے کہا گیا کہ میچ میں ریفری کے فرائض انجام دینے ہیں تو آپ لنگی اتار کر چڈی پہن لیجئے، فٹ بال کے کھلاڑی اور ریفری انڈر وئیر ہی پہنتے ہیں۔لیکن جھنگا پہلوان نے لنگی اتارنے سے انکار کر دیا۔
’’یہ لنگی میری شخصیت کی پہچان ہے اور میں اسے اتار کر اپنی شخصیت کھونا نہیں چاہتا۔‘‘
سب نے بہت سمجھایا کہ استاد آپ لنگی پہن کر ریفری کے فرائض انجام نہیں دیں گے۔لیکن جھنگا پہلوان اس پر بضد تھے کہ وہ لنگی پہن کر ہی یہ کام کریں گے اور بخوبی اپنا فرض انجام دیں گے۔پہلوان کی ضد کے آگے دو ٹیمیں جھک گئیں۔
میدان میں درمیان میں کھیل شروع کرنے کے لئے گیند رکھی گئی اور پہلوان کو اشارہ کیا گیا کہ وہ سیٹی بجا کر کھیل شروع کرنے کا اشارہ کرے۔
پہلوان نے سیٹی بجائی اور کھیل شروع ہوگیا۔
دونوں ٹیم کے کھلاڑی پیروں سے گیند کو مارتے دور تک لیکر چلے گئے۔ کبھی ایک ٹیم بال کو دوسری ٹیم کے میدان میں لے جانے کی کوشش کرتی کبھی دوسری ٹیم مدمقابل ٹیم کے میدان میں۔
پہلوان دور کھڑے اس تماشے کو دیکھ رہے تھے۔
ایگل کے کپتان انزل کی نظر پہلوان پر پڑی تو وہ دوڑتا ہوا ان کے پاس آیا اور بولا۔ ’’استاد اس طرح ایک جگہ کھڑے ہو کر فٹ بال میچ میں ریفری شپ نہیں کی جاتی ہے۔ ریفری کو بال کے ساتھ دوڑنا پڑتا ہے۔ تبھی تو اسے پتہ چلتا ہے کہ کون سا کھلاڑی کیا غلطی یا فاول کر رہا ہے۔ اور وہ اسے سزا دیتا ہے۔‘‘
پہلوان کے لیے یہ بات نئی تھی۔ اب کھیل کا یہ اصول ہے کہ ریفری بھی بال کے ساتھ ساتھ دوڑے تو انہیں بھی دوڑنا ہی پڑے گا۔
جیسے ہی بال ان کے قریب آئی وہ بال کے ساتھ دوڑنے کی کوشش کرنے لگے۔ لیکن دونوں ٹیموں کے کھلاڑی بڑے پھرتیلے تھے۔ چیتے کی رفتار سے دوڑ کر بال کو اپنے قبضے میں کرتے اور بال کو دوسرے کھلاڑی کی طرف اچھال دیتے۔ ہاتھی کی طرح ڈیل ڈول والا جھنگا پہلوان بھلا ان کی سی پھرتی اور تیزی سے کہاں دوڑ سکتا تھا۔
دوڑنا تو دور وہ ٹھیک طرح سے چل بھی نہیں پا رہا تھا۔
ان کے لئے سب سے بڑی مصیبت ان کی لنگی بنی ہوئی تھی۔
جیسے ہی وہ دوڑتے ان کا پیر لنگی میں اٹکتا اور وہ دھڑام سے منہ کے بل زمین پر گر جاتے۔ تماشائیوں کو فٹ بال دیکھنے سے زیادہ جھنگا پہلوان کو دیکھنے میں مزہ آرہا تھا۔ جب وہ گرتے تو سارا میدان قہقہوں سے بھر جاتا تھا۔ موٹا تازہ، جسم جب زمین سے ٹکراتا تو کئی مقامات پر چوٹیں آتیں اور وہاں سے درد کی لہریں اٹھنے لگتیں۔
لیکن فرض کی ادائیگی کے لئے وہ پھر سے اٹھتے اور بال کے ساتھ دوڑنے کی کوشش کرتے جب وہ میدان میں دوڑتے تو ایسا لگتا جیسے بہت بڑی گیند میدان میں چاروں طرف لڑھک رہی ہے۔
تھوڑی دیر میں ہی ان پر ایک نئی مصیبت نازل ہوئی۔
ان کی سانسیں پھول گئیں اور وہ ہانپنے لگے۔ ایک جگہ کھڑے ہو کر وہ اپنی اکھڑی سانسوں پر قابو پانے کی کوشش کرنے لگے۔ ادھر انہیں کھڑا دیکھ کر تماشائی شور مچانے لگے۔
’’ ریفری ۔۔۔ ریفری ۔ ایک جگہ کیا کھڑے ہو ، دوڑو ۔۔۔۔ فاول دو ۔۔۔۔‘‘
تماشائیوں کے شور سے بچنے کے لئے وہ دوڑتے لیکن پیر پھر لنگی میں الجھ جاتا اور وہ پھر دھڑام سے گر جاتے۔
’’استاد کیوں اتنی پریشانی مول لے رہے ہو۔‘‘ انزل ان کی پریشانی دیکھ کر ان کے قریب آیا ، ’’ لنگی اتار دو، اس میں عافیت ہے۔‘‘
پہلوان نے اس وقت لنگی اتار دی، اور صرف اپنی لنگوٹ پر دوڑنے لگے۔ ادھر تماشائیوں نے سمجھا پہلوان کی لنگی کھل گئی ہے ۔ وہ اس بات پر پیٹ پکڑ پکڑ کر ہنسنے لگے۔ اچانک کھلاڑیوں میں ایک آواز ابھری۔
’’ پینلٹی کک۔‘‘
اور انہوں نے بھی منہ سے آواز نکالی۔
’’ پینلٹی کک دی جاتی ہے۔‘‘
ایگل کو پینلٹی کک دی گئی تھی آزاد کے کھلاڑی حیران تھے کہ ان سے تو ایسی کوئی غلطی نہیں ہوئی تھی جس کی وجہ سے ان کے خلاف پینلٹی کک دی جائے۔
بہر حال ایگل نے پینلٹی کک پر گول بنا دیا۔
پورا میدان تماشائیوں کی تالیوں اور شور سے گونج اٹھا۔
پہلوان نے دیکھا یہ خوشیاں گول بننے پر منائی جا رہی ہیں۔ تماشائیوں کو گول بننے پر بڑا مزا آتا ہے تو ٹھیک ہے، میں تماشائیوں کی پسند کا خیال رکھوں گا۔
تھوڑی دیر بعد انہوں نے آزاد ہند کو پینلٹی کک دے دی۔
’’ استاد ۔ میری ٹیم نے تو کوئی غلطی نہیں کی ہے تو آپ نے ہمارے خلاف پینلٹی کک کیوں دی‘‘ ، انزل احتجاج کرتا ہوا ان کے پاس آیا۔ انہیں یاد آیا کہ کوئی کھلاڑی اگر حجت کرے تو اسے کارڈ نکال کر ڈرایا دھمکایا جانا چاہئے۔
انہوں نے ایک کارڈ نکال کر انزل کو بتایا۔
تماشائی زور زور سے تالی بجانے لگے۔
جھنگا پہلوان کتنی اچھی امپائرنگ کر رہے ہیں۔ ابھی پینلٹی کک دی اور اب ایک کھلاڑی کو بک کر کے کارڈ بتایا۔
انہوں نے انزل کو کون سا کارڈ بنایا تھا اور اس کارڈ کا مطلب کیا تھا انہیں خود اس بات کا پتہ نہیں تھا۔ لیکن انہوں نے دیکھا ان کے کارڈ بتانے پر انزل ڈر گیا ہے۔
پینلٹی کک پر آزاد ہند ٹیم نے گول کر کے اسکور برابر کر دیا۔ اسکور برابر کر تے ہی تماشائیوں میں ایک جوش پیدا ہو گیا اور دونوں ٹیمیں بھی پورے جوش و خروش سے کھیلنے لگیں۔
تھوڑی دیر بعد انہوں نے ایگل کو کارنر دیا جس پر اس نے گول بنا ڈالا اس پر آزاد ہند کے کپتان کو غصہ آگیا لیکن وہ جھنگا پہلوان سے حجت کرنا نہیں چاہتا تھا۔ اسے ڈر تھا کہ جھنگا پہلوان حجت کرنے پر اسے کارڈ دکھا کر اسے بک کرے گا۔
اس نے ایک دو کھلاڑیوں کو بلا کر کان میں کچھ کہا۔
تھوڑی دیر میں کھیل کا نقشہ بدل گیا۔
جن کھلاڑیوں کو آزاد ہند کے کپتان نے کچھ کہا تھا وہ بال کے ساتھ ساتھ دوڑنے کے بجائے پہلوان کے ساتھ دوڑ رہے تھے ، دوڑتے ہوئے موقع ہاتھ لگتے ہی ایک کھلاڑی نے پہلوان کو ٹانگ ماری اور آگے بڑھ گیا پہلوان منہ کے بل زمین پر گر پڑے۔
دوڑنا پہلوان کے لئے مشکل ہو رہا تھا۔
وہ سر سے پیر تک پسینے میں نہا گئے تھے، دوڑنے سے ان کی سانسیں پھول رہی تھیں اور جان نکلتی محسوس ہورہی تھی۔ اپنے اتنے بھاری بھرکم جسم کے ساتھ انہیں دوڑنے کا کم ہی اتفاق ہوا تھا۔ اور یہاں تو مسلسل دوڑنا پڑ رہا تھا۔ سونے پر سہاگہ یہ کہ یہاں اس کھلاڑی نے انہیں گرا دیا تھا۔ تھوڑی دیر کے بعد دوسرے کھلاڑی نے انہیں گرایا۔ اور اس کے بعد تیسرے کھلاڑی نے۔ وہ ان سے کارنر دینے کا بدلہ لے رہے تھے۔
جب پہلوان کو یہ محسوس ہوا کہ ان سے بدلہ لیا جا رہا ہے تو انہیں بھی غصہ آگیا اور انہوں نے بھی بدلہ لینے کی ٹھان لی۔
انہوں نے ایک دو تین کھلاڑیوں کو کارڈ دکھا کر بک کیا۔
تینوں کو انہوں نے کون سا کارڈ دکھایا تھا انہیں خود اس کارڈ کے کام کا پتہ نہیں تھا۔ لیکن کارڈ دکھاتے ہی تماشائی شور مچانے لگے۔
’’باہر ۔۔۔۔ باہر ۔۔۔ باہر جاؤ۔‘‘
’’باہر جاؤ۔۔۔‘‘
اور کھلاڑی چپ چاپ باہر چلے گئے تو پہلوان کی بانچھیں کھل گئیں۔ تو یہ کارڈ ہے جسے بتا کر کھلاڑی کو باہر بھیجا جا سکتا ہے۔
اب صورت حال یہ تھی کہ آزاد ہند کے تین کھلاڑی باہر بھیجے جا چکے تھے۔ اور وہ آٹھ کھلاڑیوں کے ساتھ ہی کھیل رہی تھی۔
تھوڑی دیر میں پہلوان کو محسوس ہوا یہ تو ناانصافی ہے۔ ایک ٹیم سب کھلاڑیوں کے ساتھ میچ کھیلے اور دوسری آدھے کھلاڑیوں کے ساتھ ، فوراً انہوں نے ایگل کے تین کھلاڑیوں کو کارڈ دکھا کر میدان سے باہر جانے کا حکم دے دیا۔
وہ کھلاڑی احتجاج کرتے رہ گئے کہ انہوں نے کون سی غلطی کی ہے۔ کس غلطی کی سزا کے طور پر انہیں میدان کے باہر بھیجا جا رہا ہے۔ یہ تو بتایا جائے۔ لیکن اس بات کا جواب تو پہلوان کے پاس بھی نہیں تھا۔
اس درمیان وقفہ بن گیا۔
اور پہلوان کی جان میں جان آئی۔
للو دوڑتا ہوا میدان میں آیا اور وہ پہلوان کے جسم سے پسینہ پونچھنے لگا۔
’’ واہ استاد ، کیا ریفری کا فرض انجام دیا ہے۔ پوری اسٹیڈیم کے تماشائی آپ کے اس کام کی تعریف کر رہے ہیں۔ کہہ رہے ہیں اس سے اچھا ریفری آج تک انہوں نے نہیں دیکھا ۔ انصاف سے کام لیتا ہے۔ کسی بھی ٹیم کی طرف داری نہیں کرتا ہے۔ ایک ٹیم کے تین کھلاڑیوں کو اگر میدان کے باہر کرتا ہے تو دوسری ٹیم کے بھی تین کھلاڑیوں کو میدان کے باہر کرتا ہے۔ دونوں ٹیموں کو پینلٹی کک کا برابری کا موقع دیتا ہے۔‘‘
’’ سب کچھ خود بخود ہو رہا ہے۔‘‘ استاد نے اعتراف کیا، ’’کیسے ہو رہا ہے، خود مجھے بھی اس بات کا علم نہیں ہے۔ میں تو اس کھیل کا ا ب ت بھی نہیں جانتا ہوں۔‘‘
کھیل دوبارہ شروع ہوا۔
اب پہلوان نے اپنی طور پر فٹ بال کھیلنا شروع کر دیا۔
ایسا محسوس ہورہا تھا جیسے سارے کھلاڑی کٹھ پتلیاں بن گئیں ہیں جن کی ڈور جھنگا پہلوان کے ہاتھ میں ہے۔ وہ جس طرح چاہے انہیں نچا سکتا ہے۔ جھنگا پہلوان دونوں ٹیموں کے ساتھ کٹھ پتلیوں والا کھیل رہے تھے۔ جن کی ڈوریں ان کے ہاتھ میں تھیں۔
ایک ٹیم کو پینلٹی کک کارنر دے دیتے۔ وہ اس کا فائدہ اٹھا کر مد مقابل ٹیم کے خلاف گول اسکور کر کے مد مقابل پر سبقت حاصل کر کے خوشیاں مناتی۔ اس کے شائقین خوشیاں مناتے لیکن وہ خوشیاں زیادہ دیرپا نہیں ہوتیں۔
فوراً پہلوان مدمقابل ٹیم کو بھی اس طرح کا ایک موقع عنایت کر دیتے اور وہ بھی اس موقع کا فائدہ اٹھا کر اسکور برابر کر کے اپنے مد مقابل ٹیم کے جوش پر ٹھنڈا پانی ڈال دیتی۔
اس کے بعد ایک دوسرے پر سبقت پانے کے لئے دونوں ٹیمیں پھر سے جوش کے ساتھ کھیلنے لگتیں۔ لیکن دراصل جھنگا پہلوان دونوں ٹیموں کے ساتھ کھیل رہے تھے اور انہیں کھلا رہے تھے۔
دونوں ٹیمیں ان کی ریفری شپ کی شکایت بھی نہیں کر رہی تھیں کیونکہ وہ دونوں کو برابر برابر کا موقع دے رہے تھے۔ اگر وہ ایک ٹیم کو غلط پینلٹی کک ، کارنر وغیرہ دیتے بھی تو دوسری ٹیم مطمئن رہتی۔
کوئی بات نہیں اگلی بار ہماری باری ہے۔
اس کے بعد جھنگا پہلوان نے ایک نیا کھیل شروع کر دیا۔
آزاد ہند ٹیم کو مسلسل پانچ پینلٹی کک کا موقع دے دیا۔ جس پر انہوں نے مسلسل پانچ گول اسکور کر کے ایگل پر پانچ گولوں کی سبقت حاصل کر لی۔
انزل کے ہوش اڑ گئے۔ اسے اپنی ٹیم کی شکست سامنے دکھائی دینے لگی۔ اسے پتہ تھا اس کی ٹیم اتنی طاقت ور نہیں ہے کہ مسلسل پانچ گول اسکور کر کے برابری کرے۔ لیکن یہ کھیل تو جھنگا پہلوان کے ہاتھ میں تھا۔ انہوں نے کچھ دیر بعد ہی انزل کی ساری فکریں دور کر دیں۔
اس بار انہوں نے انزل کی ٹیم کو مسلسل پانچ موقع دئیے اور ان موقعوں کا فائدہ اٹھا کر انزل کی ٹیم نے پانچ گول اسکور کر کے حساب برابر کر دیا۔ تماشائیوں کا جوش بڑھتا جا رہا تھا۔ ان کے دلوں کی دھڑکنیں بڑھتی جا رہی تھیں اتنے گول اسکور ہوں دونوں ٹیمیں اس طرح سے کھیلیں گی اس بارے میں انہوں نے سوچا بھی نہیں تھا۔
اس کے بعد اپنے ریفری ہونے کا فائدہ اٹھاتے ہوئے جھنگا پہلوان کے آزاد ہند ٹیم کے دو بہترین کھلاڑیوں کو کارڈ بتلا کر میدان کے باہر کر دیا۔
یہ دیکھ کر آزاد ہند ٹیم کے کپتان کے ہوش اڑ گئے۔ اسے اپنی ٹیم کی شکست اپنی آنکھوں کے سامنے دکھائی دینے لگی۔
لیکن اگلے ہی لمحہ جھنگا پہلوان نے انصاف سے کام لیتے ہوئے ایگل کے دو بہترین کھلاڑیوں کو کارڈ بتا کر میدان کے باہر کر دیا۔
دونوں ٹیمیں مساوی کھلاڑیوں کے ساتھ کھیل رہی تھیں۔
باہر ہونے والے تمام کھلاڑیوں کا کوئی قصور نہیں تھا ۔ لیکن قوانین فٹ بال کا کھیل ایجاد کرنے والوں نے بنائے تھے۔
ریفری بنے جھنگا پہلوان ان کا استعمال اپنی طور پر کر رہے تھے۔
دونوں ٹیموں نے میدانی گول ایک بھی اسکور نہیں کیا تھا۔
ایسا محسوس ہوتا تھا دونوں ٹیموں میں میدانی گول اسکور کرنے کا دم خم ہے ہی نہیں وہ گول جھنگا پہلوان کی عنایت سے اسکور کر رہے تھے۔
جھنگا پہلوان کبھی ایک ٹیم کو مسلسل پانچ کک کا موقع دیکر اس سے پانچ گول اسکور کراتے تو دوسری بار دوسری ٹیم کو یہی موقع دے کر حساب برابر کرنے کا سامان مہیا کر دیتے۔
خدا خدا کر کے میچ کا ٹائم ختم ہوا۔
میچ کے خاتمے پر دونوں ٹیموں کا اسکور تھا ۵۰ : ۵۰ ۔۔
یعنی دونوں ٹیموںنے ۵۰ ، ۵۰ گول اسکور کئے تھے۔ میچ برابری پر ختم ہوا، اس لیے دونوں ٹیموں کو ایک ایک پوائنٹ دے دیا گیا۔
اور فٹ بال کے صحیح شائقین اس میچ کو دیکھ کر اپنا سر پیٹ رہے تھے۔ ان کی کچھ سمجھ میں نہیں آرہا تھا یہ میچ دونوں ٹیموں کے کھلاڑیوں نے کھیلا ہے۔
یا فٹ بال میچ کے ریفری بنے جھنگا پہلوان نے ۔۔۔۔۔
۔ ۔ ۔ ٭۔ ۔ ۔ ٭۔ ۔ ۔ ٭۔ ۔ ۔

نومبر 4, 2010 at 12:21 تبصرہ کریں

Older Posts


A Place For Indian And Pakistani Chatters

Todd Space Social network

زمرے

RSS Urdu Sad Poetry

  • GHAZAL BY SAGHAR SIDDIQUI مارچ 1, 2015
    Filed under: Ghazal, Nazam, Saghir Siddiqui, Urdu Poetry Tagged: FAREB, Ghazal, Ghazal by Saghir Siddiqui, NASHEMAN, Pakistani Poetry Writer, QAYAMAT, Sad Urdu Poetry, SAGHAR, Saghir Siddiqui, SHAGOOFAY, SHETAN, TERI DUNIYA MAI YA RAB, Urdu, Urdu Adab, Urdu Poetry, Urdu shayri, ZEEST
  • چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں فروری 28, 2015
    چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں نہ میں تم سے کوئی امید رکھوں دل نوازی کی نہ تم میری طرف دیکھو غلط انداز نظروں سے تمہیں بھی کوئی الجھن روکتی ھے پیش قدمی سے مجھے بھی لوگ کہتے ہیں کے یہ جلوئے پرائے ہیں میرے ہمراہ اب ہیں رسوائیاں میرے ماضی […] […]
  • Dil main Thkana اکتوبر 6, 2012
    درد کا دل میں ٹھکا نہ ہو گیا زندگی بھر کا تماشا ہو گیا مبتلائے ھم بھی ہو گئے ان کا ہنس دینا بہانا ہو گیا بے خبر گلشن تھا میرے عشق سے غنچے چٹکے راز افشا ہو گیا ماہ و انجم پر نظر پڑنے لگی ان کو دیکھے اک زمانہ ہو گیا تھے نیاز […] […]
  • Ghazal-Sad Poetry ستمبر 9, 2012
    Ghazal-Sad PoetryFiled under: Bazm-e-Adab, Ghazal, Meri Pasand, My Collection, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry, Poetry Collection, ROMANTIC POETRY, Sad Poetry, Uncategorized, Urdu, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: ahmed faraz, Bazm-e-Adab, Female Writer, Ikhlaki Kahanian, Imran […]
  • Ik tere rooth janne say اگست 28, 2012
    تیرے روٹھ جانے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا پھول بھی کھلیں گے تارے بھی چمکیں گے مینا بھی برسے گی ھاں مگر کسی کو مسکرانہ بھول جائے گا "اک تیرے روٹھ جانے سے” Filed under: Nazam, Urdu Poetry Tagged: Faraq, ik teray, Indian, Muhabbat, Muskurana, Nahi, Nazam, nazm, Pakistani, Poem, Poetry, Romantic Urdu Poetry, […] […]
  • yadoon ka jhoonka اگست 13, 2012
    یادوں کا اک جھونکا آیا ھم سے ملنے برسوں بعد پہلے اتنا رٰوئے نہیں تھے جتنا روٰئے برسوں بعد لمحہ لمحہ گھر اجڑا ھے، مشکل سے احساس ہوا پتھر آئے برسوں پہلے ، شیشے ٹوٹے برسوں بعد آج ہماری خاک پہ دنیا رونے دھونے بیٹھی ھے پھول ہوئے ہیں اتنے سستے جانے کتنے برسوں بعد […] […]
  • Log Mosam Ki tarah Kaisay Badal Jaty Hain-Urdu Gazhal جولائی 29, 2012
    Log Mosam Ki tarah Kaisay Badal Jaty Hain-Urdu Gazhal Filed under: Bazm-e-Adab, Dil Hai Betaab, Meri Pasand, My Collection, Nazam, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry Collection, Sad Poetry, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: Bazm-e-Adab, Best Urdu Poetry, Dil Hai Betaab, Marsia Sad P […]
  • Mera Qalam Meri Soch Tujh Se Waabasta – Romantic Urdu Poetry جولائی 21, 2012
    MERA QALAM MERI SOCH TUJH SE WAABASTA – ROMANTIC URDU POETRY Mera qalam meri soch tujh se waabasta Meri to zeest ka her rang tujh se waabasta Lab pe jo phool they khushiyon k sab tere hi they Aaj is aankh k aansu b tujh se waabasta Hum kisi b rah pe chalen paas tere […]
  • Kabhi Khawabon Main Milain-Pakistani writers جولائی 12, 2012
    Kabhi Khawabon Main Milain-Pakistani writers Filed under: Pakistani writers Tagged: ahmed faraz, BEST URDU NOVELS, Female Writer, Ikhlaki Kahanian, Imran Series, Islamic Books, Islamic Duayen, Jasoosi Duniya, JASOOSI KAHANIAN, Jasoosi Novels, Mazhar Kaleem, Meri Pasand, My Collection, Night Fighter, Pakistani Writers, PARVEEN SHAKIR, Poetry Collection, roman […]
  • Ghazal-Sad Poetry جولائی 4, 2012
    Ghazal-Sad PoetryFiled under: Bazm-e-Adab, Meri Pasand, My Collection, Pakistani writers, Picture Poetry, Poetry, Poetry Collection, Poetry Urdu Magazine, ROMANTIC POETRY, Sad Poetry, Uncategorized, Urdu, Urdu Khazana, Urdu Magazine, Urdu Poetry, Urdu Point, Urdu Station, Urdu Time, Urdu translation Tagged: ahmed faraz, Bazm-e-Adab, Female Writer, Ikhlaki Ka […]